مشال قتل کیس میں مفرور د ملزموں میں سے ایک کی پولس میں خود سپردگی

پشاور : مشال خان کو پیٹ پیٹ کر ہلاک کرنے کے معاملہ کے مطلوب باقی ماندہ دومفرور ملزموں میں سے ایک صابر مایار نے پولس کے سامنے خود سپردگی کر دی۔ مردان کے ڈسٹرکٹ پولس افسر ڈاکٹر میاں سعید کے مطابق تیسرے مفرور ملزم کی تلاش جاری ہے۔میار کے بارے میں، جو پختون اسٹوڈنٹس فیڈریشن کا صدر تھا،کہاجاتا ہے کہ وہ مشال کے قتل کی سازش رچنے والے طلبا میں سے ایک تھا کیونکہ اس نے مردان عبد الولی خان یونیورسٹی میں مشالکی سرگرمیوں پر اسے جان سے مارنے کی دھمکی دی تھی۔
مشال کے قتل کے بعد مایاراور اس کے دو دیگر ساتھی فرار ہو گئے تھے۔ پاکستان تحریک انصاف کے ایک تحصیل کونسلر اور تین مفرور مٰن سے ایک اس ماہ کے اوائل میں گرفتار کر لیے گئے تھے۔باقی57کے خلاف جنہیں گرفتار کر لیاگیا تھا 7فروری کو ہری پور کی انسدا دہشت گردی عدالت نے سزا سنادی تھی۔فیصلہ کے مطابق ایک مجرم کو سزائے موت ، پانچ کو عمر قید ، 25کو چار سال کی قید کی سزا سنادی گئی تھی اور26کو بری کر دیا گیا تھا۔بعد ازاں مشال کے گھر والوں نے انکی رہائی کو چیلنج کر دیا تھا۔
27فروری کو پشاور ہائی کورٹ نے تین تا چار سال کی سزائے قید پانے والے 25مجرموں کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم جاری کر دیا تھا۔ان مجرموں نے دلیل دی تھی کہ چونکہ انہیں پانچ سال سے کم مدت کی سزا ملی ہے اس لیے انہیں ضمانت پر رہا کیا جا سکتا ہے۔ توہین مذہب کے الزام میں مشال کو یونیورسٹی میںا پریل2017کوبری طرح پیٹنے کے بعد گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا تھا۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Mashal lynching case absconder sabir mayar surrenders to mardan police in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply