جماعت الدعویٰ کی عدالت شرعیہ میں مطلوب شخص قاضی کے ہی خلاف لاہور ہائی کورٹ پہنچ گیا

 لاہور: پاکستان میں شرعی عدلاتوں کے قیام کی جماعت الدعویٰ کی کوششوں کو اس وقت زبردست جھٹکا لگا جب زر تنازعہ کے حوالے سے ایک شکایت پر جماعت الدعویٰ کی تشکیل کردہ عدالت شرعیہ میں طلب کیے جانے والا ایک شخص شرعی عدالت کے قاضی کے خلاف ہی لاہور ہائی کورٹ پہنچ گیا۔ اس نے ہائی کورت میں داخل اپنی عرضی میں قاضی کے خلاف اس بنیاد پر کارروائی کرنے کی استدعا کی کہ وہ متوازی نظام عدلیہ چلارہے ہیں۔
سمن آباد کے اس شخص خالد سعید نے معروف وکیل مقبول حسین شیخ کے توسط سے داخل کی گئی اپنی عرضی میں داخلہ سکریٹری ، وفاقی وزیر قانون، پنجاب چیف سکریٹری ، پبجان کے انسپکٹر جنرل، لاہور سی سی پی او اور جماعت الدعویٰ کے قاضی حافظ ادریس کو فریق بنایا ہے۔عرضی گذار نے کہا ہے کہ اسے ایک شخص محمد اعظم کی شکایت پر دارالقضا الشریعہ ، جماعت الدعویٰ ، مسجد القدسیہ ، چوبرجی لاہور کے لیٹر پیڈ پر تحریر ایک سمن موصول ہوا ہے جس میں اسے عدالت شرعیہ میں حاضر ہونے کا حکم دیا گیا ہے۔
جس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ حکم عدولی پر اس کے خلاف شرعی قانون کی روشنی میں کارروائی کی جائے گی۔اس نے یہ بھی الزام لگایا کہ جماعت الدعویٰ کی عدالت کے قاضی نے اسے فون کر کے دھمکی آمیز انداز میں اپنے روبرو پیش ہونے کا حکم دیا۔جسٹس شاہد بلال حسین نے اس عرضی پر مدعا علیہان کو نوٹس جاری کر کے آئندہ سماعت26اپریل تک موقوف کر دی۔

Title: man summoned by jud sharia court moves lhc | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply