شاہ زیب قتل کیس کے کلیدی ملزم شاہ رخ جتوئی کا جیل ریکارڈ عدالت نے طلب کر لیا

کراچی: ملیر جوڈیشیل مجسٹریٹ نے دوشنبہ کو شاہ زیب قتل کیس کے کلیدی ملزم شاہ رخ جتوئی کا جیل ریکارڈ طلب کر لیا۔عدالت 2012میں قتل کرکے جعلی دستاویزات پر بیرون ملک سفر کر ہے اصل ملزم کے کیس کی سماعت کر رہی ہے۔
سماعت شروع کرتے ہی عدالت نے ملزم کو عدالت میں حاضر کرنے کا حکم دیا۔جواب میں جتوئی کے وکیل نے عدالت کو مطلع کیا کہ ان کا موکل سپریم کورٹ کے حکم پر جیل میں ہے۔ جس پر عدالت نے جیل حکام سے اس کا ریکارڈ طلب کر لیا۔وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف آئی اے کے مطابق مشتبہ کے حاضر نہ پانے کے باعث اسے ابھی تک مجرم بھی قرار نہیں دیا جاسکا ہے۔
یاد رہے کہ شاہ زیب کو 25دسمبر کو کراچی کے ایک امیروںکی رہائش والے علاقہ میںایک بارسوخ جاگیر دار کے بیٹے شاہ رخ جتوئی نے گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔استغاثہ نے بتایا کہ جتوئی واردات کے دو روزز بعد27دسمبر 2012کو دوبئی بھاگ گیا تھا۔لیکن ایک دو ہفتوں کے بعد جتوئی کو دوبئی سےواپس لے آیا گیا تھا۔
جتوئی کے شریک ملزموں میں بلاول ہاؤس کا ایک سابق پروٹوکول افسر ، جتوئی کا بھائی وناب علی جتوئی، سکندر علی جتوئی گروپ آف کمپنیز کا ڈائریکٹر محمد خرم، سابق پی آئی اے حکام محمود سلطان اور وصی اختر اور دو ٹرویل ایجنٹ عمر ڈومکی اور ابو بکر ڈومکی ہیں۔

Title: malir court summons shahrukh jatois jail report in illegal escape case | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply