لاہور ہائی کورٹ نے زینب قتل کیس میں مجرم کوسزائے موت کا فیصلہ برقرار رکھا

لاہور: لاہور ہائی کورٹ نے قصور کی ایک سات سالہ بچی زینب سے جنسی زیادتی اور پھر قتل کرنے کے مقدمہ میں ایک انسداد دہشت گردی عدالت کے فیصلہ کی توثیق کرتے ہوئے مجرم عمران علی کی اپنی سزائے موت کے خلاف اپیل خارج کر دی۔
جسٹس صداقت علی خان اور جسٹس شہرام سرور چودھری پر مشتمل ایک ڈویژن بنچ نے استغاثہ اور مدعا علیہہ کے دلائل بغور سننے کے بعدیہ اپیل خارج کر دی۔ سماعت شروع ہوتے ہی ملزم کی پیروری کرنے والاے وکیل اسد جمال نے بنچ سے استدعا کی وہ انہیں دلائل یکجا کرنے کے لیے مزید مہلت دیں۔
لیکن بنچ نے ان کی درخواست مسترد کر دی اور وکیل سے کہاکہ جرح شروع ک کریں ورنہ مجرم کو سرکاری وکیل دے دیا جائے گا۔تب جمال نے اس ڈی این اے رپورٹ کو، جس کی بنیاد پر انسداد دہشت گردی عدالت نے سزائے موت سنائی تھی ، تسلیم کرنے پر سوال اٹھایا۔
انہوں نے کہا کہ گوکہ یہ مکمل شہادت ہوتی ہے لیکن اس ثبوت پر عدالت کو آنکھ بند کر کے یقین نہیں کر لینا چاہیے۔ لیکن عدالت عالیہ نے اس دلیل کو نہیں مانا اور فریقین کے دلائل مکمل ہوتے ہی ذیلی عدالت کے فیصلے کو برقرار رکھا۔

Title: lhc upholds death penalty for convict in zainab murder case | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply