ملک میں عدلیہ پہلے سے بہتر انداز میں کام کر رہی ہے:چیف جسٹس

سلام آباد:(ایجنسی ) چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار کا کہنا ہے کہ آج ملک میں عدلیہ پہلے سے بہتر انداز میں کام کر رہی ہے اور ملک میں اچھا اور سستا انصاف فراہم کرنے کی پوری کوشش کی جارہی ہے۔
وفاقی دارالحکومت میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ اس ملک کی بقا قانون کی حکمرانی میں ہے، جس پر سب کا اتفاق ہے، تاہم قانون کی عملداری کے لیے مضبوط جوڈیشل سسٹم کا ہونا بھی ضروری ہے۔اپنے خطاب میں چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ’ہم نے معاشرے سے نا انصافی کے خاتمے کا آغاز کرنے کے لیے بنیاد رکھ دی ہے تاہم یہ آپ دوستوں پر منحصر ہے کہ آپ اس پر کس طرح عمارت قائم کر سکتے ہیں‘۔
چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے دورانِ تقریب ایک پیغام پڑھ کر سنایا جس میں لکھا تھا کہ ’مجھے پینے کا صاف پانی چاہیے، مجھے صاف ہوا اور صاف ماحول چاہیے، مجھے خالص دودھ چاہیے، مجھے مردہ جانوروں کا گوشت نہیں کھانا، مجھے کینسر اور ہیپاٹائٹس جیسی مہلک بیماریوں سے تحفظ چاہیے، مجھے میری فصلوں کی جائز قیمت ملنی چاہیے، مجھے ہسپتالوں میں مفت علاج چاہیے، مجھے سستا اور معیاری انصاف ملنا چاہیے‘۔مذکورہ پیغام کو پڑھنے کے بعد چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ یہ تمام چیزیں عوام کو فراہم کرنا ہی ہماری جدوجہد ہے۔
تقریب کے دوران خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ میرا یہ مقصد تھا کہ ہم عوام کی خدمت کریں لیکن ہم اپنے کام کی سمت سے ہٹ گئے، تاہم ہمارے پاس ابھی بھی وقت ہے۔ انہوں نے وکلا اور جج صاحبان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ میں چاہتا ہوں کہ آپ محبت کے ساتھ ان انسانی حقوق سے جڑے معاشرتی عوامل کو حل کرنے کے لیے میرے فوج بنیں چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ ملک میں قانون کی حکمرانی ہونی چاہیے، جبکہ ججز اور وکلا کو کسی سے محاذ آرائی نہیں کرنی چاہیے۔

Title: judiciary not seeking confrontation with any state institution cjp stresses | In Category: پاکستان  ( pakistan )
Tags: , ,

Leave a Reply