عمران خان نے فیض آباد دھرنا ختم کرانے میں فوج کے مستحسن کردار کی ستائش کی

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے فیض آباد دھرنے سے بے تکے ڈھنگ سے نمٹنے پر وفاقی حکومت کو زبردست ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ دھرنے پر بیٹھے لوگوں پر پولس کریک ڈاؤن سے پورا ملک متاثر ہوا اور اگر فوج نے مداخلت نہ کی ہوتی تو ملک میں افراتفری مچ گئی ہوتی۔ عمران خان نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ فوج نے مداخلت کر کے دھرنا ختم کروایا ہے، کیونکہ ختم نبوت کا مسئلہ ہم سب کے لیے اہم تھا جسے موجودہ حکومت نے بہت ہلکے میں لیا تھا۔
انہوں نے حکومت وقت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اگر مذہبی جماعت کے مطالبات کو پہلے ہی تسلیم کر لیا جاتا تو ملک کو اس زبردست نقصان سے بچایا جاسکتا تھا جو فیض آباددھرنے سے پہنچا ہے لیکن حکومت نے معاملہ کو سنجید گی سے نہیں لیا۔ انہوں نے کہاکہ فوج نے دھرنے والوں سے معاہدہ کر کے ملک کو سیاسی طور پر عدم استحکام سے بچایا ہے۔ اب ایسے موقعے پر فوج کی برائی کرنا ٹھیک نہیں۔ عمران خان نے مزید کہا کہ جب مسلم لیگ( ن) کے لوگ ختم نبوت قانون میںترمیم کے حق میں نہیں تھے تو معلوم کرنا چاہیے کہ پھر کون اس ترمیم کے پیچھے تھا۔ انہوں نے تاکید کرتے ہوئے کہا کہ اس سازش کو بے نقاب کیا جائے اور قوم کے سامنے اس کے حقائق لائے جائیں۔عمران خان نے کہا ان پر دباو تھا کہ مظاہرین کا ساتھ دیا جائے لیکن میں معاملات کو مذاکرات کے ذریعہ حل کرنا چاہتا تھا۔
انہوں نے کہا کہصرف نواز شریف ہی نہیں بلکہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی سمیت تمام وزرا نا اہل ہیں جوکہ ایک نا اہل وزیر اعظم کو بچانے میں لگے ہوئے ہیں۔ عمران خان نے تاکید کی ہے کہ قبل از وقت الیکشن ہی تمام مسائل کا حل ہے۔ دریں اثنا ا اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل خالد خٹک نے دھرنے میں ناکامی کے متعلق رپورٹ سپریم کورٹ میں داخل کر دی۔ذرائع کے مطابق رپورٹ میں انکشاف ہوا کہ دھرنا قائدین نے سیکیورٹی اہلکاروں کے مذہبی جذبات کو ابھارا جس کے باعث اہلکاروں نے مظاہرین کے لئے نرم رویہ اختیار کیا اور ان کے خلاف کاروائی کرنے سے گریزاں رہے۔

Title: imran lauds military role to end faizabad sit in | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply