پاکستان میں فیض آباد دھرنا 24گھنٹے کے اندر ختم کرانے کے لیے عدالتی حکم جاری

اسلام آباد: اسلام آباد ہائی کورٹ نے جمعہ کے روز شہر کے ضلع انتظامیہ کو حکم دیا ہے کہ وہ ہفتہ کی صبح تک فیض آباد میں دھرنے کو ختم کرنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کرے۔
ہائی کورٹ کے جسٹس شوک عزیز صدیقی نے یہ حکم جاری کرتے ہوئے کہاکہ گذشتہ روز پارلیمنٹ نے آئین میں ترمیم کی جانے والی ختم نبوت کی مذکورہ شقوں کو اپنی اصل شکل میں بحال کردیا ہے جس کے بعد مظاہرے اور دھرنے کا جواز ہی نہیں۔
جس وقت ایک شہری عبدالقیوم کی عذر داری پر جسٹس شوکت عدلاتی فیصلہ سنارہے تھے توعدالت میں اسلا م آباد کے ڈپٹی کمشنر ڑیٹائرڈ کیپٹن مشتاق احمد اور ڈپٹی انسپکٹر جنرل آپریشنز بھی موجود تھے۔
اس ناکہ بندی سے عوام کو درپیش مشکلات کا ذکر کرتے ہوئے عدالت نے ڈسٹرکٹ ایڈمنسٹریشن کو حکم دیا کہ وہ پرامن یا بزور طاقت فیض آباد میں دھنرنا دینے والوںکو منتشر کر دے۔عدالت نے یہ بھی کہاکہ اگر ایڈمنسٹریشنکو اس کام کے لیے پنجاب رینجرز یا فرنٹئیر کانسٹوبلری کی بھی ضرورت پڑے تو وہ اس کی خدمات حاصل کرنے کا اختیار رکھتا ہے۔

Title: ihc orders administration to evict religious parties from faizabad interchange | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply