معروف صحافی حامد میر کے خلاف سابق آئی ایس آئی افسر کو اغوا اور قتل کرنے مقدمہ درج

اسلام آباد:اسلام آباد پولیس نے ملک کے معروف سینئر صحافی اور ٹی وی اینکر حامد میر کے خلاف انٹر سروس انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے ایک ریٹائرڈ اہلکار خالدخواجہ کو اغوا اور پھر اسے قتل کر دینے کا مقدمہ درج کرلیا۔
ذرائع کے مطابق حامد میر کے خلاف یہ مقدمہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے اس فیصلے کی روشنی میں درج کیا گیاجو اس نے مارچ 2010 میں اسلام آباد کے سیکٹر جی 10/2 کے ایک مکان سے مبینہ طور پر اغوا ہونے والے خالد خواجہ کی اہلیہ شمامہ ملک کی جانب سے دائر پٹیشن پر کچھ روز قبل ہونے والی سماعت کے دوران دیا تھا۔ خالد خواجہ کی اہلیہ نے اس معاملہ میں ایف آئی آر میں الزام لگایا کہ حامد میر اور عثمان پنجابی نے اپنے نامعلوم ساتھیوں کے ہمراہ مل کر ان کے خاوند خالد خواجہ کو اغوا کیا تھا۔
واضح رہے کہ خالد خواجہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے دور میں ہونے والے لال مسجد آپریشن کے واقعے میں اہم کردار رہے ہیں اور انھیں 2010 میں جنوبی وزیرستان میں قتل کر دیا گیا تھا۔ خالد خواجہ اپنی زندگی میں یہ دعویٰ بھی کرتے تھے کہ انھوں نے القائدہ کے رہنما اسامہ بن لادن سے سابق وزیر اعظم میاں محمدنواز شریف کو بے نظیر بھٹو کی حکومت کے خلاف پیسے بھی دلوائے تھے تاہم میاں نواز شریف اس کی تردید کرتے ہیں۔
پولیس کو دی گئی درخواست میں کہا گیا کہ، بعد ازاں خالد خواجہ کو شمالی وزیرستان لے جایا گیا اور پھر 30 اپریل 2010 کو ان کی گولیوں سے چھلنی لاش کرم کوٹ سے برآمد ہوئی واضح رہے کہ حامد میر اور عثمان پنجابی کے درمیان خالد خواجہ کے حوالے سے گفتگوکاایک آڈیو ٹیپ بھی شالیمار تھانے کے ریکارڈ میں موجود ہے۔

Title: hamid mir booked over kidnapping killing of retired isi official | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply