لاہور میں مردم شماری کی ٹیم پر خود کش حملہ، 4فوجی اہلکار سمیت6ہلاک 19زخمی

لاہور:پاکستان کی مشرقی شہر لاہور کے بیدیاں روڈ علاقہ میں آج مردم شماری کی ایک ٹیم کو نشانہ بنا کر کیے گئے خود کش دھماکہ میں6افراد ہلاک19 دیگر زخمی ہوگئے۔ ہلاک شدگان میں چار فوجی اور دو مردم شماری ٹیم کے کارکن شامل ہیں۔تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے ایک بیان جاری کرکے اس حملے کی ذمہ داری لی ہے۔ پنجاب حکومت کے ترجمان ملک احمد خان نے اس کی تصدیق کی کہ مانا والا چوک کے قریب ہونے والا خودکش دھماکہ تھا جس میں مردم شماری کے عملے کو نشانہ بنایا گیا۔ خیال رہے کہ مانا والا چوک پر ہونے والے اس دھماکے کو ابتدائی طور پر وین میں سلینڈر دھماکا قرار دیا گیا تھا تاہم پنجاب حکومت کے ترجمان نے دھماکے کے خودکش ہونے کی تصدیق کردی۔ واضح رہے کہ طویل تاخیر اور کئی سیاسی و انتظامی پیچیدگیوں کا سامنا کرنے کے بعد ملک میں 19 سال بعد 15 مارچ سے مردم شماری کا آغاز ہوا ہے۔
مردم شماری کا پہلا مرحلہ 15 اپریل تک مکمل ہوجائے گا، جبکہ دوسرے مرحلے کا آغاز 25 اپریل سے ہوگا جو 25 مئی تک جاری رہے گا۔ پہلے مرحلے میں ملک کے 63 اضلاع میں ہونے والی مردم شماری میں 1 لاکھ 75 ہزار فوجی اہلکاروں کو بھی تعینات کیا گیا ہے، جو مردم شماری میں ہاتھ بٹانے کے ساتھ ساتھ سروے کرنے والے عملے کو سیکیورٹی فراہم کرنے پر مامور ہیں۔ ریسکیو 1122 کی جانب سے جاری کی گئی رپورٹ کے مطابق شہید ہونے والے 4 جوانوں میں3 پاک بری فوج کے اور ایک اہلکار پاک فضائیہکا تھا۔ دھماکے سے قریب کھڑی گاڑیوں اور عمارتوں کو بھی نقصان پہنچا۔ دھماکے میں زخمی ہونے والے افراد کو سی ایم ایچ اور جنرل ہسپتال منتقل کردیا گیا۔ دھماکے کے بعد پولیس اور ریسکیو ادارے جائے وقوع پر پہنچ گئے۔
کورکمانڈر لاہور لیفٹیننٹ جنرل صادق علی نے کمبائنڈ ملٹری ہسپتال کا دورہ کیا اور دھماکے کے زخمیوں کی عیادت کی۔ ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں کے خلاف آپریشن ہر جگہ جاری رہے گا اور انہیں دھماکے میں شہید ہونے والے جوانوں پر فخر ہے.دوسری جانب پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر باجوہ نے مردم شماری ہر صورت مکمل کرنے کے عزم کا اظہار کردیا۔ پاک فوج کے محکمہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق آرمی چیف کا کہنا تھا کہ فوجی جوانوں اور مردم شماری عملے کی قربانی عظیم ہے۔ جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ جوانوں نے فرائض کی ادائیگی کے دوران جام شہادت نوش کیا، مردم شماری قومی ذمہ داری ہے جو ہر صورت مکمل ہوگی۔ کمشنر لاہور عبداللہ نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ اس وقت نظم و ضبط اور حوصلے کی ضرورت ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ دھماکے کے بعد بھی مردم شماری کا عمل جاری رہے گا اور متبادل ٹیم اسے جاری رکھے گی۔
صحافیوں کے سوال پر کمشنر لاہور کا کہنا تھا کہ ‘مردم شماری کی ٹیم کے ساتھ سیکیورٹی موجود تھی لیکن یہ ایک خودکش حملہ تھا جس کی پیش بندی کرنا بہت مشکل ہوتا ہے‘۔ بیدیاں روڈ پر ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں جانی نقصان پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے وزیراعظم نواز شریف کا کہنا تھا کہ وہ جاں بحق ہونے والے افراد کی مغفرت کے لیے دعاگو ہیں۔ نواز شریف نے مردم شماری کے عملے کے ہمراہ فرائض کی انجام دہی میں مصروف شہید ہونے والے پاک فوج کے جوانوں کو خراج عقیدت پیش کیا اور متعلقہ انتظامیہ کو ہدایات جاری کیں کہ وہ صوبائی حکومت سے بھرپور تعاون کرے۔ اس دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے دھماکے کی رپورٹ طلب کرلی۔ ان کی جانب سے انتظامیہ کو یہ ہدایت بھی جاری کی گئی کہ دھماکے کے زخمیوں کو علاج معالجے کی بہترین سہولتیں بہم پہنچائے جانے کو یقینی بنائیں۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Four pakistan army soldiers slain in lahore suicide blast targeting census team in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply