اسرائیل میں نو مسلم شحض کوداعش سے تعلق رکھنے پر 38 ماہ جیل کی سزا

یروشلم: (ایجنسی) اسرائیل میں یہودیت سے اسلام قبول کرنے والے نو مسلم ویلنٹن میزلیوسکی کو داعش سے تعلقات رکھنے کے جرم میں 38 ماہ جیل کی سزا دی۔
اسرائیل کی ضلعی عدالت نے گزشتہ روز 40 سالہ نو مسلم ویلنٹن میزلیوسکی کو انتہا پسند جماعت داعش سے تعلق رکھنے اور دہشت گردی کی واردات کی منصوبہ بندی کے مقدمات میں 38 ماہ قید کی سزا سنا ئی ہے جس کے بعد ملزم کو سخت حفاظتی پہرے میں عدالت سے جیل منتقل کردیا گیا، نو مسلم شخص نے الزمات کی تردید کرتے ہوئے عدالتی فیصلے کو انتقامی کارروائی قرار دیا۔
اسرائیلی عدالت نے نومسلم ویلنٹن کے خلاف اپنے فیصلے میں کہا کہ ملزم کے ریاست مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے شواہد موجود ہیں تھا جب کہ ملزم کے انتہا پسندانہ خیالات سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ وہ داعش میں شمولیت اختیار کرنا چاہتا تھا جس کا ملزم نے برملہ اظہار بھی کیا ہے اس لیے ملزم کو 38 ماہ قید کی سزا سنائی جاتی ہے۔
بین الااقوامی خبر رساں ایجنسی کے مطابق بیلا روس کے رہائشی 40 سالہ ویلنٹن نے 1996 میں اسرائیل ہجرت کی تھی جہاں اسرائیلی آرمی کی لازمی ٹریننگ کے دوران 2000 میں ملزم نے اسلام قبول کرلیا تھا، ملزم کی مشکوک سرگرمیوں کے باعث سیکیورٹی اداروں نے اسے واچ لسٹ میں شامل کیا تھا اور شواہد ملنے کے بعد 2017 کو حراست میں لیا تھا۔

Title: israeli man sentenced to 38 months in prison for trying to join isis | In Category: خبریں  ( news )

Leave a Reply