وادی کشمیرمیں ٹرانسپورٹ کی مسلسل معطلی سے امتحانات دینے والے طلبا پریشان

جموں: وادی کشمیرمیں پبلک ٹرانسپورٹ کی مسلسل معطلی دسویں اور بارہویں جماعت کے امتحانات دینے والے طلبا کے لیے مشکلات ومسائل کا باعث بن گئی ہے۔وادی میں گزشتہ تین ماہ سے پبلک ٹرانسپورٹ کی نقل وحمل مسلسل معطل ہے جس کے باعث لوگوں کو مسائل کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ تاہم کچھ سڑکوں پر چھوٹی مسافر گاڑیوں کی آمد ورفت جزوی طور پر بحال ہوچکی ہے۔

طلبا کا کہنا ہے کہ انتطامیہ کے طلبا کے لیے امتحانات کے دوران ٹرانسپورٹ کی سہولت دستیاب ہونے کے دعوے سراب ثابت ہورہے ہیں کیونکہ دور افتادہ علاقوں کے طلبا کو امتحانی سینٹروں تک پہنچنے کے لیے پیدل سفرکرنا پڑتا ہے۔دسویں جماعت کے طلبا کے ایک گروپ نے خبر رساں ادارے ساؤتھ ایشین وائر کوبتایا کہ پبلک ٹرانسپورٹ کی معطلی کی وجہ سے ہمیں امتحانی سینٹروں تک پہنچنے کے لیے مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے اور ہم امتحانی سینٹروں پراکثراوقات دیر سے پہنچتے ہیں۔

ایک طالب علم زاہدنے کہا کہ امتحان کے پہلے ہی دن میں آدھا گھنٹہ دیر سے امتحانی سینٹر پر پہنچ گیا لیکن مجھے پھر مزید وقت نہیں دیا گیا جس کی وجہ سے میں کئی سولات، جن کو میں کر سکتا تھا، نہیں کرسکا۔ایک طالبہ شاہدہ نے ساؤتھ ایشین وائر کو بتایا کہ میرے والد میرے ساتھ امتحانی سینٹر تک آتے ہیں اور پھر وہیں امتحان ختم ہونے تک انتظار کرتے ہیں، دیگر کئی بچیاں بھی اپنے والد کو ساتھ لاتی ہیں اور پھر یہ لوگ وہیں بیٹھے رہتے ہیں’۔

محمد سلیم نامی ایک طالبہ کے والد نے کہا کہ موجودہ حالات میں ہمیں بچوں خاص طور پر بچیوں کو اکیلے باہر بھیجنے میں اندیشے لاحق رہتے ہیں اور کسی اجنبی کے ساتھ گاڑی میں یا پیدل بھیج بھی نہیں سکتے ہیں اس لئے ہم اپنا کام کاج چھوڑ کر خود ہی بچوں کے ساتھ جاتے ہیں’۔انہوںنے کہا کہ انتطامیہ نے بچوں کے لیے ایس آر ٹی سی گاڑیوں کا انتظام کرنے کا اعلان کیا تھا لیکن شاید وہ اعلان بھی باقی اعلانوں کی طرح اعلان تک ہی محدود رہا۔

غلام حسین نامی ایک والد نے ساؤتھ ایشین وائر کو بتایا کہ امتحانات کے پیش نظر میں نے اپنے بچے کو امتحانی سینٹر کے قریب ہی اپنے ایک رشتہ دار کے ہاں رکھا ہے۔انہوں نے کہا: ‘میں ایک دورافتادہ علاقے کا رہنا والا ہوں، میرا بیٹا بارہویں جماعت کا امتحان دے رہا ہے امتحانی سینٹر کم سے کم پندرہ کلو میٹر کی دوری پر واقع ہے جہاں وقت پر پہنچنا اس کے لئے ممکن نہیں ہے لہذا میں نے اس کو امتحانی سینٹر کے قریب ر ہائش پذیر ایک رشتہ دار کے ہاں رکھا ہے’۔

والدین کے ایک گروپ، جو ایک امتحانی سینٹر کے باہر اپنے بچوں کے انتظار میں بیٹھے ہوئے تھے، انہوں نے بتایا کہ حکومت بچوں کے امتحانات منعقد کرکے یہ باور کرنا چاہتی ہے کہ یہاں سب کچھ نارمل ہے۔ انہوں نے کہا’یہاں حالات ٹھیک نہیں ہیں سب کچھ بند ہے بچے بھی نصاب مکمل نہیں کرسکے لیکن اس کے باوجود یہاں امتحانات منعقد کیے گئے ۔(ساؤتھ ایشین وائر)

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Students hassled over far off exam centres in kashmir valley in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.