کشمیر میں جمعہ کی نماز کے بعد طلبا اور سیکورٹی فورسز میں پھر ٹکراو?

سری نگر:سیکورٹی فورسز نے آج وادءکشمیر کے متعدد علاقوں بشمول گرمائی دارالحکومت سری نگر ، شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ اور جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں نماز جمعہ کی ادائیگی کے بعد احتجاجی مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے لاٹھی چارج اور آنسو گیس کا استعمال کیا۔ خیال رہے کہ کشمیری علیحدگی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ مولوی عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے سیکورٹی فورسز کی جانب سے کشمیری طلباءپر تشدد ڈھانے اور تعلیمی اداروں پر دھاوا بولنے کو ریاستی دہشت گردی کی بدترین شکل قرار دیتے ہوئے عوام سے 21اپریل بعد نماز جمعہ طلبا کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کے طور ایک گھنٹے کا پ±رامن علامتی احتجاج بلند کرنے کی اپیل کی تھی۔ انہوں نے کہا تھا کہ نوجوان طلباءہماری قوم کا مستقبل ہیں اور ان پر کسی بھی قسم کی زیادتی کسی بھی صورت میں برداشت نہیں کی جائے گی۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق سری نگر کی تاریخی جامع مسجد میں نماز جمعہ کی ادائیگی کے فوراً بعد لوگوں کی ایک بڑی کشمیر کی آزادی کے حق میں نعرے بازی کرتے ہوئے جلوس کی صورت میں نوہٹہ چوک کی طرف بڑھنے لگی۔ تاہم وہاں پہلے سے تعینات سیکورٹی فورسز کی بھاری جمعیت نے احتجاجیوں کا راستہ روکا جس کے نتیجے میں کچھ نوجوان مشتعل ہوئے اور سیکورٹی فورسز پر پتھراو¿ کرنے لگے۔

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Student protests continue in kashmir in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News

Leave a Reply