شہید بھگت سنگھ کو ”دہشت گرد“ کہنے والے جموں یونیورسٹی کے پروفیسر کے خلاف تحقیقات شروع

جموں : جموں یونیورسٹی کے ایک پروفیسر کے ذریعہ مجاہد آزادی شہید بھگت سنگھ کو ایک ”دہشت گرد“ قرار دینے سے زبردست تنازعہ کھڑا ہو گیا اور حکام کو فوری طور پر اس معاملہ کی تحقیقات کے لیے ایک پینل تشکیل دینا پڑا۔

واضح ہو کہ جمعرات کو پولیٹیکل سائنس کے شعبہ میں ایک لیکچر دیتے ہوئے پروفیسر محمد تاج الدین نے یہ بات کہی تھی۔ جس کے فوراً بعد طلبا نے اس کی شکایت وائس چانسلر سے کی۔

جموں یونیورسٹی کے ترجمان ڈاکٹر ونے تھوسو نے کہا کہ پولیٹیکل سائنس کے کچھ طلبا جمعرات کی شام وائس چانسلر سے ملے اور انہیں اس واقعہ کے بارے میں بتایا ۔

انہوں نے ثبوت کے طور پر ایک سی ڈی بھی پیش کی۔وائس چانسلر پروفیسر منوج کے ڈھر نے فوریکارروائی کرتے ہوئے تحقیقات کا حکمدیتے ہوئے پروفیسر تاج الدین کو مزید لیکچر دینے سے روک دیا۔

ڈاکٹر تھوسو نے بتایا کہ وائس چانسلر نے یونیورسٹی کے تعلیمی امور سے متعلق ڈین پروفیسر کیشو شرما کو تحقیقاتی کمیٹی کا سربراہ مقرر کیا ہے۔

کمیٹی کو سات روز کے اندر اپنی رپورٹ داخل کرنے کہا گیا ہے اور ا س پروفیسر تاج الدین کو فی الفورتا حکم ثانی تدریسی فرائض کی انجام دہی سے روک دیا گیا۔

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Row over jammu professors alleged terrorist remark on bhagat singh in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News
What do you think? Write Your Comment