کٹھوعہ اجتماعی عصمت دری و قتل کیس کے تین مجرموں کو عمر قید اور باقیوں کو5-5سال کی

سری نگر: جموں و کشمیر کے کٹھوعہ میں خانہ بدوش طبقہ کی ایک 8سالہ بچی کی اجتماعی عصمت دری کے بعد قتل کیس میں پنجاب کی پٹھان کورٹ کی خصوصی عدالت نے جن6ملزموں کو مجرم قرار دیا ھا ان میں سے تین مجرموں مندر کے پجاری سانجی رام ، پرویش اور دیپک کھجوریہ کو عمر قید اور فی کس ایک ایک لاکھ روپے جرمانے کی سزا سنائی جبکہ ہیڈ کونسٹبل تلک راج، اسسٹنٹ سب انسپکٹر آنند دتہ اور اسپیشل پولس افسر سریندر ورما کو پانچ پانچ سال کی قید اور 50/50ہزار وپے جرمانے کی سزا سنائی۔عدالت نے اصل مجرم سانجی رام کے بیٹے وشال کو جو ساتواں ملزم تھابری کر دیا

۔ 15صفحاتی کی فرد جرم کے مطابق گذشتہ سال 10جنوری کو اغوا کی گئی 8سال کی بچی کو کٹھوعہ ضلع کے ایک گاو¿ں کے مندر میں قیدی بنا کر رکھا گیا اور اس سے اجتماعی جنسی زیادتی کی جاتی رہی۔

اسے قتل کرنے سے پہلے چار روز تک بیہوش رکھا گیا۔ اور گلا دبا کر مارنے سے عین قبل اس سے ایک بار پھر ریپ کیا گیا۔

جموں سے تقریباً100کلومیٹر اور کٹھوعہ سے30کلومیٹر دور پڑوسی ریاست پنجاب کے شہر پٹھانکوٹ کی ایک خصوصی عدالت میں تقریباً ایک سال تک کیس کی سماعت چلی اور آج اس کافیصلہ سنا یا گیا۔

متوفیہ کے وکیل فاروقی خان نے کہا کہ انہیں فیصلہ سے د درجہ مایوسی ہوئی ہے کیونکہ وہ ان مجرموں کو پھانسی کی سزا سنائے جانے کی توقع کر رہے تھے۔انہوں نے مزید کہا کہ اب ان کے پاس یہی متبادل ہے کہ پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ سے رجوع کیا جائے۔

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Kathua rape murder case verdict live updates life imprisonment for 3 accused victims lawyer disappointed in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.