کشمیر میں اگرکوئی سیاستداں یا بیورو کریٹ مارا گیا تو سمجھا جائے گا گورنرکے حکم پر ہلاک کیا گیا :عمر عبداللہ

نئی دہلی: جموں و کشمیر کی گورنرن ستیہ پال ملک نے کرگل۔لداخ ٹورزم فیسٹیول کا افتتاح کرتے ہوئے اپنے دہشت گردوں اور کرپٹ لوگوں و سیاست دانوں کے حوالے سے کہ گئے جملے اپنی ذاتی سوچ بتایا۔

اور کہا کہ بطور گورنر انہوں نے ان خیالات کا اظہار نہیں کیا ہے۔ بلکہ انہوں نے جو کچھ کہا وہ ریاست میں بڑھتی بدعنوانی اور کرپشن اور کشمیریوں کی غربت دیکھ کر طیش میں آکر کہاہے۔

واضح ہو کہ انہوں نے ریاست کے انتہاپسندوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ سلامتی دستوں کے لوگوں کو نہیں بلکہ ان کرپٹ لوگوں کو ہلاک کریں جنہوں نے ملک کی دولت لوٹی ہے اور کشمیر کو لوٹ رہے ہیں۔

لیکن انہوں نے صفائی دی کہ گورنرکی حیثیت سے انہٰں ایسا بیان نہیں دینا چاہئے تھا بیان صحیح نہیں لیکن میری اپنی سوچ وہی ہے جو میں نے کہا ہے۔ بہت سے سیاست داں اور بیورو کریٹس کرپشن کے دریا میں گلے گلے ڈوبے ہوئے ہیں۔ان کے اس بیان سے سیاسی سطح پر شدید ردعمل ظاہر کیا جا رہا ہے۔

جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ اور نیشنل کانفرنس رہنما عمر عبداللہ نے تو یہاں تک کہہ دیا کہ اگر جموں و کشمیر میں قومی دھارے میں شامل کوئیسیاستداں یا حاضر ملازمت /سبکدوش بیورو کریٹ مارا جاتا ہے تو یہ سمجھا جائے گا کہ یہ قتل جموں و کشمیر کے گورنر ستیہ پال ملک کے فرمان پر کیا گیا ہے۔

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: In fit of anger jk governor on shocking suggestion to terrorists in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.