کرفیو کے باعث سری نگر کی مسجدوں میں نماز جمعہ نہیں ہوئی

سری نگر: وادی کشمیر میں عائد کرفیو کی وجہ سے آج ریاستی دارلخلافہ سری نگر کی تاریخی ومرکزی جامع مسجد اور درجنوں دیگر مساجد میں نماز جمعہ ادا نہ ہوسکی۔
قابل ذکر ہے کہ بزرگ علیحدگی پسند رہنما و حریت کانفرنس (گ) کے چیئرمین سید علی گیلانی، حریت کانفرنس (ع) کے چیئرمین میرواعظ مولوی عمر فاروق اور جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے کل اپنے ایک مشترکہ بیان میں ائمہ مساجد اور جمعہ خطیبوں سے جمعہ نماز کے بعد حالیہ دنوں میں ہلاک کئے گئے لوگوں کی غائبانہ نماز جنازہ ادا کرنے اور بعد میں عوامی مظاہروں کی قیادت کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا تھا کہ کمانڈر برہان وانی اور اس کے ساتھیوں کی موت کے بعد سرکاری فورسز نے عوامی مظاہروں کے خلاف جس طرح سے طاقت کا بے تحاشا استعمال کرکے 40کے لگ بھگ نہتے شہریوں کو ہلاک اور سینکڑوں کو عمر بھر کے لیے ناخیز اور ناکارہ بنادیا ہے، وہ ایک سنگین مسئلہ ہے اور اس کے خلاف ہر سطح پر اور ہر ممکن طریقے سے احتجاج بلند کیا جانا ضروری ہے۔
کشمیر انتظامیہ نے علیحدگی پسند قیادت کی اس اپیل پر عمل درآمد کو روکنے کے لئے وادی بھر میں جمعہ کی علی الصباح ہی کرفیو نافذ کردیا گیا۔ تاہم شہرہ آفاق ڈل جھیل کے کناروں پر واقع درگاہ حضرت بل میں نماز جمعہ ادا کرنے کی اجازت دی گئی جہاں خطیب و امام محمد سید فاروقی نے حالیہ ہلاکتوں کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔(یو این آئی)

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Friday prayer could not be held in srinagars mosques due to curfew in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News

Leave a Reply