کشمیر میونسپل انتخابات میں پہلے مرحلہ کی پولنگ مایوس کن رہی

سری نگر: بائیکاٹ کی کال اور دہشت گردوں کی دھمکیوں کے سائے میں وادی کشمیر کے پہلے مرحلہ میں پانچ اضلاع میں ہونے والے میونسپل انتخابات کے 57وارڈوں میں بہت کم فیصد پولنگ ہوئی۔صبح سات بجے جب پولنگ شروع ہوئی تو اسی وقت اندازہ ہو گیا تھا کہ بہت کم لوگ ووٹ ڈالنے نکلیں گے۔

شام چار بجے تک ہونے والی پولنگ مجموعی اعتبار سے پر امن رہی اور سری نگر و پانڈی پور علاقوں میں تشدد کی اکاد دکا وزارداتیں ہوئیں۔لیکن اس میں کوئی بڑا جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا۔

چیف الیکٹورل افسر شیلین کابرا کے مطابق جموں میں59فیصد اور وادی میں17.5فیصد ووٹ پڑے۔پانچ اضلاع پر محیط 57میونسپل وارڈوں میں پولنگ ہوئی۔ جن میں سری گر میونسپل کارپوریشن کے تین ایک بڈگام 16بادی پورہ 15بارہمولہ ، کپواڑہ ضلع میں ہندواڑہ کے 7اور کپواڑہ کے 11وارڈز میں پولنگ ہوئی۔البتہ کارگل ضلع میں بھاری پولنگ ہوئی۔

حریت لیڈروں سید علی گیلانی،اور میر واعظ عمر فاروق اور جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ (جے کے ایل ایف) کے چیرمین یٰسین ملک کی علیحدگی پسند تنظیموں کے ذریعہبائیکاٹ کال کے باعث زبردست حفاظتی بندو بست کیا گیا تھا۔وادی مٰں مکمل ہڑتال رہی ۔یہاں تک کہ عام ٹریفک بھی بند رہا۔

Read all Latest kashmir news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from kashmir and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Following boycott call low turnout witnessed in kashmir in Urdu | In Category: کشمیر Kashmir Urdu News
What do you think? Write Your Comment