نکاح حلالہ و تعدد ازدواج کو چیلنج کرنے والی عذر داری کی فوری سماعت سے سپریم کورٹ کا انکار

نئی دہلی: سپریم کورٹ آف انڈیا نے کہا ہے کہ مسلمانوں میں رائج نکاح حلالہ اور تعد د ازدواج کی جوازیت جاننے کے لیے ایک پانچ ججی آئینی بنچ تشکیل دے گا۔

یہ فیصلہ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس دیپک مشرا کی سربراہی والی تین ججی بنچ نے جس کے دیگر دو جج جسٹس اے ایم کھانویلکر اور جسٹس وائی چندر چوڑہیں، مدعی ثمینہ بیگم کی اس درخواست پر فوری سماعت سے انکار کرتے ہوئے دیا جس میں اس نے تعدد ازدواج اور نکاح حلالہ کو چیلنج کیا تھا۔

یم کورٹ میں ثمینہ بیگم ، نفیسہ خان، ایم محسن اور بی جے پی لیڈر اور ایڈووکیٹ اشون کمار اپادھیائے کی عرضیاں داخل ہیں جن میں تعدد ازدواج ، نکاح حلالہ، شیعوں میں ہونے والا عارضی نکاح متعہ اور سنیوں میں ہونے والی مختصر مدتی شادی مسیار کے آئینی جواز کو چیلنج کیا گیاہے۔

واضح ہو کہ سپریم کورٹ نے گذشتہ سال22اگست کو سنی مسلمانوں میں ایک زمانے سے چلے آرہے بیک وقت تین طلاق کے رواج پر پابندی عائد کرنے کے بعداس سال 26مارچ کو تعدد ازدواج ، نکاح حلالہ، شیعوں میں ہونے والا عارضی نکاح متعہ اور سنیوں میں ہونے والی مسیار نام سے اسی نوعیت کی مختصر مدتی شادی کے آئینی جوازکو چیلنج کرنے والی عذر داری کوفیصل کرنے کے لیے ایک پانچ ججی بنچ تشکیل دینے کا فیصلہ سنایاتھا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Will consider creating larger bench on pleas against nikah halala polygamy sc in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply