قومی اردوکونسل کے صدر دفترمیں معروف شاعر بدنام نظر کو استقبالیہ

نئی دہلی۔لوک گیت ہمارا تاریخی و تہذیبی اثاثہ ہے ۔ لوک گیتوں میں ہمارا ہزاروں سال کا ہندوستان سمایا ہوا ہے۔ اگر ہمیں اپنے قدیم اور اصل ہندوستان کو دیکھنا اور جاننا ہے تو ہمیں لوک گیتوں کا مطالعہ کرنا چاہےے۔ مگر تشویش ناک بات یہ ہے کہ موجودہ نسل ان گیتوں سے دور ہوتی جا رہی ہے اور جدید تہذیب کی چمک نے اسے اپنے ماضی سے دور کر دیا ہے۔ جب کہ ہم اپنے ماضی کی بازیافت کےے بغیر کامیاب نہیں ہو سکتے۔

ان خیالات کا اظہار قومی اردو کونسل کے ڈائرکٹر ڈاکٹر شیخ عقیل احمد نے کونسل کے صدر دفتر میں جناب بدنام نظر کے اعزاز میں منعقدہ ایک تقریب میں کیا۔ انھوں نے کہا کہ ہمارے وزیر عزت مآب جناب رمیش پوکھریال نشنک لوک گیتوں اور ہندوستانی تہذیب سے وابستہ پروگراموں کے انعقاد میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ ان کا ماننا ہے کہ ہندوستانی تہذیب اور فلسفے کی تلاش ہم اپنے لوک گیتوں میں کر سکتے ہیں۔ موجودہ حکومت خاص طورسے ہمارے وزیر برائے فروغ انسانی وسائل جو خود بھی ایک شاعر اور ادیب ہیں انھیں گاو¿ں کے لوک کلچر سے بہت زیادہ پیار ہے وہ بھی اس کلچر کو ملک کا اٹوٹ حصہ قرار دیتے ہیں۔

اس تقریب میں بہار کے معروف شاعر جناب بدنام نظر کو استقبالیہ دیا گیا وہ اردو کے مشہور شاعر ہیں اور ان کی شاعری میں گاو¿ں اور وہاں کی تہذیب و تمدن کا گہرا عکس نظر آتا ہے۔ انھوں نے اس موقع پر اپنی دو غزلیں سنائیں اور گاو¿ں کی رسموں پر تخلیق کردہ دو گیت بھی سنائے، جس پر حاضرین نے خوب داد و

تحسین سے نوازا۔گیت کے کچھ بند ملاحظہ کریں :
ڈھکنی کرے لا ادواس
بڑھنی کرے لا ادواس
رہیا بیٹویا تو ہی مورا بھیوا
اتنی سماد لےے جاو¿ بنگلے میں
بابو دروگہ جی کونے کسروا پیا باندھل جائے
نہ مورا پیوا لچا لنگٹوا نہ مورا پیوا چور
نسا کے ماتل پیوا مورا بیچے سڑکیا سوئے

ڈاکٹر شیخ عقیل احمد نے مزید کہا کہ بدنام نظر کی شاعری ہندوستان کی دیہی زندگی کی بھرپور عکاسی کرتی ہے اور ان کی شاعری میں گاو¿ں کو سانس لیتا ہوا دیکھ سکتے ہیں۔ آج ہم سب شہروں کی بھیڑ بھاڑ میں گم ہو گئے ہیں۔ ایسے میں ان کی شاعری سن کر دلوں کو ایک سکون سا ملتا ہے۔ اس تقریب میں قومی اردو کونسل سے ڈاکٹر عبد الرشید اعظمی، ڈاکٹر یوسف رامپوری، محترمہ آبگینہ اور محمد انصر نے بھی اپنی تخلیقات پیش کیں۔

کونسل کی اسسٹنٹ ڈائرکٹر ڈاکٹر شمع کوثر یزدانی ، ریسرچ آفیسر ڈاکٹر کلیم اللہ، شاہنواز محمد خرم ، اسسٹنٹ ایڈیٹر ڈاکٹر عبد الحی، اسسٹنٹ ایجوکیشن آفیسر ڈاکٹر فیروز عالم اور ڈاکٹر شاہد اختر کے علاوہ دیگر اسٹاف بھی موجود تھے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Warm reception given to poet at ncpul in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News
Tags:
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.