تاج محل وقف بورڈ کی ملکیت ہے تو وہ ایک ہفتہ کے اندر شاہجہاں کی دستخط شدہ دستاویز عدالت میں پیش کرے

نئی دہلی :تاج محل کے مالکانہ حقوق کے دعوے پر سپریم کورٹ نے وقف بورڈ سے کہا ہے کہ ملک میں کون اس بات پر یقین کرےگا کہ تاج محل وقف بورڈ کی املاک ہے۔
ہندوستان کے آزاد ہونے کے بعد سے یہ یادگار حکومت کے دائرہ اختیار میں آتی ہے اور محکمہ آثار قدیمہ اس کی دیکھ بھال کررہا ہے۔سپریم کورٹ نے وقف بورڈ کو حکم دیا کہ تاج محل اگر اس کی ملکیت ہے تو وہ مغل شہنشاہ شاہجہاں کے دستخط شدہ دستاویز عدالت میں پیش کرے۔سپریم کورٹ نے اس کے لیے وقف بورڈ کو ایک ہفتہ کی مہلت دی ہے۔
عدالت عظمی نے محکمہ آثار قدیمہ ( اے ایس آئی) کی عذرداری پر منگل کو سماعت کے دوران کہا کہ مغلیہ عہد کے خاتمہ کے ساتھ ہی تاج محل اور دیگر تاریخی عمارتیں انگریزوں کو منتقل ہوگئی تھیں۔عدالت عظمیٰ نے وقف بورڈ کو مزید پھٹکار لگاتے ہوئے کہا کہ اس قسم کے معاملات لا کر سپریم کورٹ کا وقت ضائع نہ کیا جائے۔

Title: wakf board claims shah jahan gave it ownership of taj mahal supreme court demands to see documents | In Category: ہندوستان  ( india )

Leave a Reply