پچاس ہزار مسلم مردوں و خواتین نے تین طلاق کے خلاف عرضداشت پر دستخط کیے

نئی دہلی: بھارتیہ مسلم مہلا آندولن کے ذریعہ کیے گئے ایک سروے میں 50ہزار مسلم مردوں و عورتوں نے تین طلاق کے خلاف ایک میمورنڈم پر دستخط کیے۔اس عرضداشت میں قومی کمیشن برائے خواتین سے استدعا کی گئی ہے کہ وہ اس رواج کو ختم کرائے اور اسے قرآنی احکام کے منافی بتائے۔
بی ایم ایم اے کی شریک بانی ذکیہ سمن نے نے یہ کہتے ہوئے اس عرضداشت کی تفصیل بیان کی کہ ابھی تک50ہزار مسلمانوں نے دستخط ہو چکے ہیں اور مزید دستخط آنے والے ایام میں ہو جائیں گے۔ہم نے خواتین کمیشن کی چیرمین ڈاکٹر للتا کمارمنگلم لو لکھا ہے کہ وہ مسلم خواتین کے اس پرانے مطالبہ کو اپنی حمایت دیں۔پتیشن مین یہ بھی کہا گیا ہے کہ مسلم خواتین ہندوستان کی شہری ہیں اور انہیں بھی آئینی تحفظ کا استحقاق حاصل ہے۔
مسلم پرسنل لا میں اس طرح ترمیم کی جائے کہ تمام تفریق آمیز طور طریقے اور رسم و رواج کو غیر قانونی قرار دے دیا جائے اور مسلم خواتین کے آئینی و قرآنی حقوق کو تحفظ مل سکے۔بی ایم ایم اے کی نور جہاں صفیہ نیاز نے کہاکہ یکطفرفہ طلاق کبھی فون پر دی جاتی ہے کبھی تحریری پیغام کے ذریعہ اور کبھی ای میل کے ذریعہ دی جارہی ہے۔جس سے خواتین کو سب سے زیادہ پریشانی جھیلنا پڑتی ہے کیونکہ وہ نان نفقہ سے محروم ہو جاتی ہیں۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Triple talaq issue 50000 muslims sign petition against unquranic pratice in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply