راوڑکیلا میں فرقہ وارانہ تشدد کے بعد امتناعی احکامات نافذ

راوڑکیلا: اڑیسہ میں راورکیلا کے نلا اور عام بازار علاقوں میں سوشل میڈیا پر ایک فوٹو کے وائرل ہونے کے بعد دو فرقوں کے درمیان تشدد کے واقعات ہوئے جس کے بعد حکم امتناعی نافذ کردےئے گئے ہیں۔
شہر میں امن و قانون نظام کو برقرار رکھنے کیلئے کل رات سے ہی سنٹرل ریزرو پولیس فورس کی کم از کم تین اور ریاستی مسلح پولیس فورس کی 20 ٹکڑیوں کو تعینات کیا گیا ہے۔ پولیس نے بتایا کہ یہ مسئلہ اس وقت شروع ہوا جب ایک مخصوص فرقہ کے چند نوجوانوں نے سوشل میڈیا پر چل رہی ایک تصویر پر اعتراض درج کیا۔
انہوں نے کل سڑکوں کو جام کر دیا۔ اس کے بعد پولیس نے سوشل میڈیا پر تصویر کی تشہیر کے الزام میں کالج کے چند طالب علموں کو حراست میں لیا اور ٹریفک کو دوبارہ بحال کرایا۔ کالج کے طالب علموں کو حراست میں لینے کی مخالفت میں وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) اور بجرنگ دل کے کارکنوں نے تھانہ کے سامنے مظاہرہ کیا۔ تاہم پولیس نے صورتحال کو قابو میں بتایا ہے۔(یو این آئی)

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Tension in rourkela after violence over offensive comment on whatsapp in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply