سپریم کورٹ کا این آئی اے کو کیرل لو جہاد کیس کی تحقیقات کرنے کا حکم

نئی دہلی:سپریم کورٹ نے کیرالہ کے مبینہ ‘لو جہاد’ معاملے کی جانچ قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے) کو آج سونپ دی، جس کی نگرانی عدالت کے سابق جج آر وی رویندرن گے۔ کیرالہ کی 24 سالہ لڑکی اکھیلا نے مذہب تبدیل کرکے اور اپنا مسلم نام ہادیہ پسند کیا تھا اور اسی نام سے مسلم نوجوان شفین جہاں سے شادی کی تھی، جسے کیرل ہائی کورٹ نے گزشتہ 24 مئی کو منسوخ کر دیا تھا۔ چیف جسٹس جے ایس کیہر کی صدارت والی بنچ نے اس معاملے میں مبینہ ‘لو جہاد’ کے پہلوؤں اور شفین کے الزامات کی جانچ کا حکم این آئی اے کو دیا ہے۔
بنچ نے اگرچہ واضح کیا کہ وہ اس معاملے میں کوئی بھی فیصلہ این آئی اے کی رپورٹ پر غور کرنے، کیرالہ پولیس کا موقف معلوم کرنے اور اکھیلا (تبدیلی مذہب کے بعد ہادیہ) سے بات کرنے کے بعد ہی کوئی فیصلہ کرے گی۔ سماعت کے دوران این آئی اے نے عدالت میں دعوی کیا کہ ‘لو جہاد’ کے واقعات ہو رہے ہیں۔
این آئی اے نے کہا، “ہندو لڑکیوں کا مذہب تبدیل کرنے اور مسلم نوجوانوں سے نکاح کرنے کے معاملے سامنے آ رہے ہیں۔” این آئی اے کے اس دعوے کے بعد عدالت نے اسے اس معاملے کی جانچ کا ذمہ سونپ دیا۔ واضح ر ہے کہ اکھیلا اور شفین جہاں نے نکاح کیا تھا، لیکن ہائی کورٹ نے لڑکی کے والد کی درخواست پر سماعت کرتے ہوئے نکاح باطل قرار دے دیا تھا۔ جس کے خلاف مسلم نوجوان نے سپریم کورٹ سے رجوع کیا ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Supreme court orders nia to probe kerala love jihad case in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply