بین الاقوامی ثالث کے فیصلہ کا احترام کرنا ہر ملک کے لیے لازم: ہندوستان

نئی دہلی:جنوبی چین کے سمندر پر بین الاقوامی ثالث کے فیصلے کا احترام کئے جانے کے سلسلے میں ہندوستان نے چین پر دباؤبڑھاتے ہوئے کہا کہ ثالثی کے حقوق پر کوئی تنازعہ نہیں ہے اور اس کا ہر ملک احترام کرتا ہے۔
وزارت خارجہ کے ترجمان وکاس سوروپ نے چین کی طرف سے ثالثی کے فیصلے کی پابندی ٹھکرائے جانے سے متعلق ایک سوال کے جواب میں کہا کہ جہاں تک سمندری قانون پر اقوام متحدہ کے معاہدے کے آرٹیکل سات میں بیان میں ثالثی اور اس کے فیصلوں کے دائرہ اختیار کا سوال ہے، وہ معاہدے کے آرٹیکل پندرہ میں واضح کیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ ثالثی نے ہندوستان سے متعلق فیصلے دیے ہیں اور اس نے ان پر عمل کیا ہے۔ مسٹر سوروپ نے ثالثی کے فیصلے پر چین کے موقف کی حمایت یا مخالفت کے بارے میں پوچھے جانے پر کہا کہ ہندوستان کے لیے یہ معاملہ کسی ملک کی حمایت یا مخالفت کا نہیں ہے۔ یہ عالمی معیار کے ساتھ عمل کا ہے۔ یہ سیاست کا نہیں بلکہ قانون کا مسئلہ ہے۔
سمندری قانون پر اقوام متحدہ کے معاہدے کے فریق کے طور ہندوستان کا ایک نظریاتی رخ ہے۔ ہندوستان کا خیال ہے کہ تمام فریقین کو مصالحت و ثالثی کا پورا احترام کرنا چاہیے جو سمندر اور سمندر کے لئے بین الاقوامی قانونی نظام کو قائم کرتی ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: South china sea issue not for or against any country in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply