اروناچل پردیش میں فوج و پولس میں تصادم معاملہ کا وزیر دفاع نے جائزہ لیا

نئی دہلی: وزیردفاع نرملا سیتا رمن اور وزیر مملکت دفاع کیرن رجی جوفوج اور اروناچل پردیش پولس کے عملہ کے درمیان تصادم کے بعد پیدا ہونے والی صورت حال کاجائزہ لیا۔

ان دونوں نے کہا کہ اس ہفتہ کے وائل میں اروناچل پردیش کے بوم ڈیلا میں مقامی پولس اہلکاروں پر فوجی جوانوں کے حملے کی واردات کا سنجیدگی سے نوٹس لیا ہے۔

لیکن انہوں نے سب سے اپیل کی کہ وہ اس معاملہ کو فوج بمقابلہ پولس اور سول ایڈمنسٹریشن کے طور پر نہ لیں۔کرن رجیجو جو اروچناچل پردیش سے ہی تعلق رکھتے ہیںکہا کہ فریقین کو یہ معاملہ افہام و تفہیم سے سلجھا لینا چاہیے۔

موصول رپورٹوں کے مطابق ہندوستانی فوج کی ایک پیدل رجمنٹ اروناچل اسکاؤٹس دوشنبہ کی شام میں شراب کے نشہ میں دھت خواتین سے چھیڑ خانی اور فحش حرکتیں کرنے کے الزام میں دو فوجیوں کی گرفتاری کے بعد کامنگ ضلع کے بوم ڈیلا کے ایک تھانے میں گھس گئے اور وہاں توڑ پھوڑ مچائی۔

فوجیوں نے تھانے میں کھڑی گاڑیوں کو نقصان پہنچایا اور پولس سپرنٹنڈنٹ کا سنگین نتائج کی دھمکی بھی دی۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Sitharaman rijiju take stock of army police clash issue in arunachal pradesh in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply