ذبح کرنے کے لیے مویشیوں کی خرید و فروخت پر جاری نوٹیفکیشن پرسپریم کورٹ کاحکم امتناعی

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے بھی ذبح کے لئے مویشویوں کی خرید و فروخت پر پاندی سے متعلق مرکزی حکومت کے نوٹیفکیشن پر آج روک لگا دی۔ مرکزی حکومت نے چیف جسٹس جے. ایس. کیہر کی صدارت والی بنچ کے سامنے دلیل دی کہ اب وہ اگلے تین ماہ میں نیا ضابطہ بنائیں گی۔ عدالت عظمی نے آج واضح کیا کہ یہ روک پورے ملک میں جاری رہے گی نہ کہ صرف تمل ناڈو میں۔ مرکزی حکومت نے عدالت کو بتایاکہ ذبح کے لئے مویشیوں کی خرید و فروخت پر روک کے لئے ضابطوں میں تبدیلی کا عمل جاری ہے۔
عدالت نے مرکزی حکومت کو یہ حلف نامہ دینے پر مجبور کر دیا کہ وہ گزشتہ دنوں جاری نوٹیفکیشن کو نافذ نہیں کرے گی۔ پچھلے نوٹیفیکشن پر مدراس ہائی کورٹ نے گزشتہ 30 مئی کو روک لگا دی تھی۔ جسٹس کیہر نے درخواست گزار سے کہا کہ حکومت کی طرف سے اگلے تین ماہ بعد جاری ہونے والے نئے نوٹیفکیشن کو دیکھیں اور اگر نئے ضابطہ سے کوئی پریشانی ہو تو وہ دوبارہ عرضی دائر کر سکتے ہیں۔ گذشتہ 23 مئی کو مرکزی حکومت نے ذبیحہ کے لئے مارکیٹ میں مویشیوں کی خریدوفروخت پر پابندی لگا دی تھی، لیکن مدراس ہائی کورٹ نے 30 مئی کو اس پر روک لگا دی تھی۔ عدالت عظمیٰ نے مویشی مارکیٹ میں ذبح کے لئے مویشیوں کے خریدنے اور بچنے پر روک لگانے والے نوٹیفکیشن کو چیلنج دینے والی درخواست پر مرکزی حکومت کو نوٹس جاری کیا تھا۔
حیدرآباد کے محمد فہیم قریشی نے سپریم کورٹ میں عرضی دائر کرکے کہا تھا کہ مرکز کا نوٹیفکیشن امتیاز ی سلوک والا اور غیر آئینی ہے، کیونکہ یہ مویشی تاجروں کے حقوق کی خلاف ورزی کرتا ہے۔ درخواست گزار نے مویشیوں کے تئیں بے رحمی کی روک تھام (ضبط شدہ مویشیوں کی دیکھ بھال اور علاج) قانون، 2017 کو بھی چیلنج کیا ہے۔ پیشے سے وکیل عرضی گزار نے دلیل دی ہے کہ مویشیوں کے تئیں بے رحمی کی روک تھام (مویشی مارکیٹ ریگولیشن) قانون، 2017 اورمویشیوں کے تئیں بے رحمی کی روک تھام (ضبط شدہ مویشیوں کی دیکھ بھال اور علاج) قانون، 2017 من مانا، غیر قانونی اور غیر آئینی ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Sc suspends centres ban on trade in cattle for slaughter in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply