سپریم کورٹ نے جموں وکشمیر میں مسلم اکثریت کو اقلیتی درجہ دینے پر مرکز کو نوٹس جاری کیا

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے آج اس عرضی پر ،کہ جموں و کشمیر میں چونکہ مسلمان اکثریت میں ہیں اس لئے انہیں اقلیتی فلاح و بہبود کے لئے مرکزی حکومت کے منصوبوں کے فوائد حاصل کرنے کے لئے موقع نہیں دیا جانا چاہئے،مرکز کو نوٹس جاری کر دیا ۔
چیف جسٹس تیرتھ سنگھ ٹھاکر کی سربراہی میں ایک ڈویڑن بینچ نے عرضی گزار انکور شرما کی مفاد عامہ کی عرضی کی سماعت کے بعد مرکزی حکومت کو یہ نوٹس جاری کیاہے۔ مسٹر شرما نے استدلا ل کیا کہ جموں کشمیر کی آبادی میں مسلمانو ں کا تناسب 68 فی صد ہے اس لئے وہ اقلیت میں ہونے کا دعویٰ نہیں کر سکتے۔ سپریم کورٹ نے مرکزی حکومت کے علاوہ جموں و کشمیر کی ریاستی حکومت اور قومی اقلیتی کمیشن کوبھی نوٹس جاری کئے ہیں۔
عرضی گزار نے وزیر اعظم کے 15 نکاتی پروگرام کے رہنما اصولوں کے تحت ریاست میں اقلیتوں کی فلاح و بہبود کے لیے دی جانے والی مراعات منسوخ کرانے میں سپریم کورٹ سے مداخلت کی درخواست کی ہے۔
مسٹر شرما نے عدالت کو یہ بھی بتا یا کہ ریاست میں کوئی ریاستی اقلیتی کمیشن موجود نہیں۔ تاہم سپریم کورٹ نے بہر حال کشمیر میں اکثریت کو مرکزی اسکیموں سے استفادہ پر حکم امتناعی جاری کرنے سے انکار کردیا۔(یو این آئی)

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Sc notice to centre on minority status to majority muslim population in jk in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply