ہجومی تشدد کے انسدا د کے لیے حکومت علیحدہ قانون بنائے:سپریم کورٹ

نئی دہلی: سپریم کورٹ آف انڈیا نے ہجومی تشدد کے حالیہ واقعات کی مذمت کرتے ہوئے حکومت سے کہا ہے کہ وہ ہجومی تشدد(لنچنگ) کے حوالے سے ایک علیحدہ قانون بنائے جس میں سزا تجویز کی گئی ہو۔

سپریم کورٹ نے لنچنگ کے حالیہ واقعات کو ”ہجومیت (ہجومی راج )کی ہولناک کارروائیاں “ بتایا۔عدالت نے کہا کہ ہجومی تشدد کے حوالے سے عوام مین بے حسی بڑھتی جا رہی ہے اور یہ فکر مندی کی بات ہے۔

اب وقت آن پہنچا ہے کہ اس کے خلاف آواز بلند کی جائے۔عدالت عظمیٰ نے ہجومی تشدد کی روک تھام کے لیے احتیاطی تدابیر ، انسدادی اور تادیبی اقدامات کرنے کی ہدایت کی۔

چیف جسٹس آف انڈیا جسٹس دیپک مشرا، جسٹس اے ایم کھانویلکر اور جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ پر مشتمل عدالت عظمیٰ کی اس بنچ نے لنچنگ کے کیسوں سے نمٹنے کے لیے کئی ہدایات دیں۔

عدالت عظمیٰ نے مرکز اور ریاستی حکومتوںکو یہ ہدایت دیتے ہوئے کہ اس کے حکم پر چار ہفتوں کے اندر عمل آوری ہوجانا چاہیے عمل آوری کے حوالے سے رپورٹ داخل کرنے کا بھی حکم دیا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Sc judgment condemns recent incidents of lynching in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply