چیف جسٹس کے مواخذہ کے نوٹس کی نامنظوری کو چیلنج کرنے والی کانگریس کی عرضی سپریم کورٹ سے خارج

نئی دہلی :سپریم کورٹ کی ایک پانچ ججی بنچ نے چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کے مواخذہ کے حوالے سے راجیہ سبھا کے دو کانگریسی ممبران پارلیمنٹ کی جانب سے داخل کی گئی وہ عرضی خارج کر دی جس میں ان دونوں نے موخذہ کی تحریک کے نوٹس کو راجیہ سبھا کے چیرمین ایم وینکیا نائیڈو کے ذریعہ مسترد کیے جانے کے فیصلے کو چیلنج کیا تھا ۔
ان دونوں اراکین نے اپنی عرضی میں چیف جسٹس کے لیے حزب اختلاف کے ممبران پارلیمنٹ کی جانب سے دیے گئے نوٹس کو مسترد کرنے کے فیصلہ کو اختیارات کے غلط استعمال اور ”جعل سازی“ بتایا ۔ دوشنبہ کوپرتاپ سنگھ باجوا اور ہرش ادرے یاجنک کی نمائندگی کرتے ہوئے وکیل سنیل فرنانڈیز نے الزام لگایا کہ راجیہ سبھا چیرمین نے 50ممبران پارلیمنٹ کے دستخط سے دیے گئے تحریک مواخذہ نوٹس کو داخل نہ کر کے ڈکٹیٹرانہ انداز میں کام کیا ہے۔
سینیئر وکیل کپل سبل نے جسٹس جے چملیشور اور جسٹس ایس کے کول پر مشتمل بنچ سے عذر داری پر جلد سماعت کی استدعا کی۔ چونکہ یہ معاملہ چیف جسٹس مشرا کے خلاف تھا، جو دوسرے کمرہ عدالت میں ایک بنچ کی سربراہی کر رہے تھے،اس لیے یہ پٹیشن چملیشور بنچ کو بھیجی گئی۔بنچ نے کہ یہ کہتے ہوئے کہ وہ تبادلہ خیال کے بعد پٹیشن کو سماعت کے لیے داخل کرنے پر غور کرے گی، سماعت منگل تک موقوف کر دی تھی۔ جسس اے کے سیکری کی سربراہی والی اس پانچ رکنی بنچ میں جسٹس جے چملیشور، ، جسٹس رنجن گوگوئی،جسٹس ایم بی لوکر اور جسٹس کورین جوزف جیسے سینیئر ترین ججز تھے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Sc dismisses plea challenging rejection of cji impeachment in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply