کوکا کولاور پیپسی کمپنیوں نے مقدس دریاؤں کے پانی میں زہر گھول کر ان کی بے حرمتی کی ہے: بابا رام دیو

بھوپال:یوگا گرو بابا رام دیو نے آج یہ الزام لگاتے ہوئے کہ ہندستانی معیشت پر غیر ملکی کمپنیوں کا قبضے کے معاملے پر تمام سیاسی جماعتوں نے خاموشی اختیار کررکھی ہے،کہا کہ وہ آئندہ پانچ سے سات برسوں میں ایک لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کی دیسی منڈی سامنے لانے کا عزم رکھتے ہیں۔ مدھیہ پردیش میں ‘نمامی دیوی نرمدے’ سیوا یاترا میں شامل بابا رام دیو نے ریاستی راجدھانی بھوپال میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ’50 لاکھ کروڑ روپے کی ہندستانی معیشت پر غیر ملکی کمپنیوں کا قبضہ ہے۔ کوئی سیاسی پارٹی اس مسئلے کو نہیں اٹھاتی کیونکہ حکمراں سابقہ حکومتوں کے معاہدوں سے بندھے ہوتے ہیں اور اپوزیشن جماعتیں بھی کسی نہ کسی شکل میں انہی سے چندہ لیتی ہیں۔ اسی سبب سے کوئی سیاسی جماعت دیسی کی بات نہیں کرتی۔ انہوں نے کہا کہ ‘میں اگلے پانچ سے سات برسوں میں ایک لاکھ کروڑ سے زیادہ کی دیسی منڈی سامنے لانا چاہتا ہوں‘۔ کوکاکولا اور پیپسی جیسی کمپنیوں کے سلسلے میں بابا رام دیو نے کہا کہ ان کمپنیوں نے دریاؤں کے ’مقدس‘ پانی میں زہر گھول کر اس کی ’بے حرمتی‘ کی ہے.
یہ کمپنیاں مصنوعات میں گلیمر کا تڑکا لگا کر فروخت کرتی ہیں۔ انہیں نہ صرف نرمدا بلکہ ملک سے بھی دور ہونا چاہئے۔ کالے دھن کے معاملے پر انہوں نے کہا کہ ملک کے اندر اور باہر جو کالا دھن ہے، وہ ملک کے لوگوں کو ملنا چاہئے۔ اندرونی کالے دھن پر سخت قدم اٹھانے کے بعد انہیں یقین ہے کہ حکومت باہر کے کالے دھن پر بھی ایسے ہی اقدامات اٹھائے گی۔ گزشتہ دنوں کسی بھی پارٹی کی تائید نہ کرنے کا بیان دینے والے بابا رام دیو نے اتر پردیش اسمبلی انتخابات کے بارے میں کوئی بھی تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا۔ وزیر اعظم نریندر مودی کے طریقہ کار کو لے کر بھی اپنی غیر جانبداری ظاہر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ انہوں نے 2014 کے پہلے مسٹر مودی کی حمایت کی تھی کیونکہ اس وقت بہت گھپلے سامنے آ رہے تھے اور وہ تبدیلی کی زمین تیار کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کی مدت کے ابھی تین سال پورے ہوئے ہیں، ابھی دو سال اور دیکھنے ہیں۔ انہوں نے یقین ظاہر کیا کہ وزیر اعظم آنے والے دو سال میں کچھ اچھا کر سکتے ہیں۔ دو ہزار کے نئے نوٹوں کے بارے میں انہوں نے کہا کہ کسی بھی اقتصادی اور سیاسی جرائم میں بڑی کرنسی ہی ذریعہ بنتی ہے کیونکہ وہ کم جگہ میں زئیادہ سمائے جا سکتے ہیں۔ اس طرح ہر غیر اخلاقی کام میں یہ ذریعے بنتے ہیں۔

Title: rs 2000 note is not good for indian economy says baba ramdev | In Category: ہندوستان  ( india )

Leave a Reply