میں نے بیان میں کسی مخصوص فرقہ کا نام نہیں لیا ۔ساکشی مہاراج

نئی دہلی: اناؤ سے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ایم پی ساکشی مہاراج نے اپنے حالیہ متنازعہ بیان پر کہا ہے کہ انہوں نے کسی مخصو ص فرقہ کا نام نہیں لیا۔ ساکشی مہاراج نے گزشتہ ہفتے اترپردیش کے میرٹھ میں سنتوں کی ایک تقریب کے دوران بیان دیا تھا کہ ملک کی آبادی بڑھانے میں ’چار بیوی، 40 بچوں کی شراکت زیادہ ہے‘۔ ان کے اس بیان کو الیکشن کمیشن نے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے نوٹس جاری کیا تھا جس کا انہیں آج 11 بجے تک جواب دینے کے لیے کہا گیا تھا۔
الیکشن کمیشن سے ملے نوٹس پر اپنا موقف رکھنے آنے والے ساکشی مہاراج نے کہا کہ اس بیان میں میں نے کسی خاص فرقہ کا نام نہیں لیا۔ ساکشی مہاراج نے کہا ”میں سنتوں کی طرف سے منعقدہ ایک پروگرام میں بول رہا تھا اور یہ کوئی سیاسی ریلی نہیں تھی۔ میں نے کسی فرقہکا نام نہیں لیا۔ میں نے چار بچے کے لئے جب کہا تھا تب بھی وبال مچا تھا اور اب 40 بچے نہیں پیدا کرنے کے لئے کہہ رہا ہوں تو اب بھی وبال مچا ہے“۔ انہوں نے کہا کہ میں نے کوئی غلط بیان نہیں دیا اور کسی فرقہ کا نام نہیں لیا۔ آبادی پر کنٹرول ہونا چاہیے۔
خواتین کوئی بچہ پیدا کرنے کی مشین نہیں ہے۔ الیکشن کمیشن کو جواب دینے کے بعد میڈیا سے بات چیت میں ساکشی مہاراج نے کہا کہ ان کا تبصرہ کسی مذہب کے خلاف نہیں تھا۔ انہوں نے کہا کہ بھگوان شری کرشن نے بھی 16 ہزار شادیاں کی تھی۔ ساکشی مہاراج نے کہا کہ وہ اپنے بیان پر قائم ہیں۔ نامہ نگاروں کے یہ پوچھنے پر کہ کیا وہ اپنے بیان پر افسوس کا اظہار کریں گے۔بی جے پی ممبر پارلیمنٹ نے کہا ”کس بات کا افسوس جب کوئی غلط بیان ہی نہیں دیا ہے“۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Religion wise population growth tfr show statement of sakshi maharaj in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply