راجیہ سبھا کی کارروائی دن بھر کے لئے ملتوی

نئی دہلی: راجیہ سبھا میں آج وقفے کے بعد بھی وزیر اعظم نریندر مودی ایوان میں موجود رہے لیکن اس کے باوجود کانگریس نے نوٹوں کی منسوخی کے سلسلے میں تحریک التوا پر دوبارہ بحث شروع نہ ہونے دی اور زبردست ہنگامہ اور نعرے بازی کی۔اس پر ایوان کی کارروائی جمعہ تک کے لئے ملتوی کرنی پڑی۔ وقفے کے بعد دو بجے جیسے ہی ایوان کی کارروائی شروع ہوئی وزیر اعظم مودی ایوان میں آئے اور خاموشی سے اپنی سیٹ پر بیٹھ گئے۔
ڈپٹی چیئرمین پی جے کورین نے کام کاج سے متعلق کمیٹی کے اجلاس کی ایوان کو اطلاع دینے کے بعد نوٹوں کی منسوخی پر جاری بحث کو دوبارہ شروع کرنے کی کوشش کی تو کانگریس کے مسٹر ستیہ ورت چترویدی نے کہا کہ وزیر اعظم نے ایوان کے باہر اپوزیشن جماعتوں پر جو الزام لگائے ہیں اس کے لیے وہ پہلے معافی مانگیں۔ اسی دوران کانگریسی اراکین نے وزیر اعظم سے معافی کے مطالبہ میں نعرے لگانا شروع کر دیے۔ ان کا کہنا تھا کہ مسٹر مودی کے معافی مانگنے کے بعد ہی بحث دوبارہ شروع ہو سکتی ہے۔ مسٹر مودی خاموشی سے ایوان میں اس ہنگامہ کو دیکھتے رہے۔کانگریس ارکان کی نعرے بازی کے جواب میں برسراقتدار پارٹی کے ارکان نے بھی جوابی نعرے بازی شروع کر دی۔ مسٹر رمیش نے کہا کہ یہ بہت سنگین معاملہ ہے۔ یہ حکومت زیادہ تر بل کو منی بل کے طور پر پیش کرتی ہے۔
تاکہ راجیہ سبھا میں اس میں کوئی ترمیم ہی نہ ہو سکے۔ انہوں نے کسی بھی بل کو منی بل کا درجہ دینے سے متعلق آئین کے آرٹیکل 110 کا ذکر کرتے ہوئے کئی الزامات لگائے اور سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم نے ان الزامات کی حمایت کی۔ مسٹر نائیڈو کے ساتھ ہی کامرس اینڈ انڈسٹری کےوزیر نرملا سیتا رمن نے اس کی پرزور مخالفت کی اور کہا کہ دوسرے ایوان کے صدر اور ایوان کے لیڈر پر الزام نہیں لگائے جاسکتے۔ اس پر مسٹر کورین نے مسٹر رمیش اور مسٹر چدبرم کے الزامات کو کارروائی سے ہٹانے کے احکامات دئےاور کہا کہ چیئرمین کے حکم پر سوال نہیں کیا جا سکتا۔اسی طرح اسپیکر کے فیصلے پر سوال نہیں ہو سکتا ہے اور ایوان کے لیڈر کے خلاف بھی الزام نہیں لگائے جا سکتے ہیں۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Rajya sabha adjourned amid opposition uproar in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply