راہل نے آڈوانی سے دس منٹ تک بات کی ،لیکن امیت شاہ کو نظر انداز کر دیا

نئی دہلی: بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے درمیان کئی معاملات پر دوریاں اور اختلافات ہیں لیکن اس کے باوجود کانگریس صدر راہل گاندھی خود کو لوک سبھا میں سابق نائب وزیر اعظم و بی جے پی صدر اور بزرگ رہنما لال کشن آڈوانی کی خیر و عافیت دریافت کرنے سے روک نہیں پائے۔
بتایا جاتا ہے کہ پیر کی صبح راہل گاندھی لوک سبھا کی کارروائی شروع ہونے سے 10منٹ پہلے ہی ایوان میں پہنچ گئے۔ وہاں اتفاق سے مسٹر آڈوانی بھی پہلے سے موجود تھے۔ راہل نے انہیں پہلی قطار کی ایک بنچ پر تنہا بیٹھا دیکھا تو ان کے پاس گئے اور ہاتھ جوڑ کر انہیں نمسکار کہا اور خیر و عافیت معلوم کی۔
جس پر آڈوانی نے کہا ان کے احوال تو ٹھیک ہیں لیکن ایوان ٹھیک نہیں ہے۔دس منٹ کی گفتگو کے دوران آڈوانی نے کہا کہ وہ ایوان کی کارروائی کے نہ چلنے سے بہت دل برداشتہ ہیں اور یہ پہلا موقع ہے کہ نہ حزب اختلاف ،نہ اسپیکر اور نہ ہی وزیر اعظم اس تعطل کو دور کر پارہے ہیں۔
تھوڑی دیر بعد راہل وہاں سے اٹھ کر اپنی سیٹ پر بیٹھ گئے۔لیکن اس کے برعکس ایک ہی گھنٹے بعد جب ایوان سے باہر نکلتے ہوئے راہل گاندھی کا سامنا بی جے پی صدر امیت شاہ سے ہواتو دونوں ایک دوسرے پر اچٹتی نظر ڈالتے ہوئے ایک دوسرے کو ہیلو تک کہے بغیر ایک دوسرے کے برابر سے گذر گئے۔

Title: rahul reaches out to advani ignores shah | In Category: ہندوستان  ( india )

Leave a Reply