وزیر اعظم نریندر مودی نے ہماچل پردیش میں تین پن بجلی پروجیکٹ قوم کے نام وقف کیے

نئی دہلی: وزیراعظم نریندر مودی نے آج ہماچل پردیش کے منڈی ضلع میں تین اہم پن بجلی پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقف کیا۔ ان پروجیکٹوں میں این ٹی پی سی۔ کولڈیم کا 800 میگاواٹ کی صلاحیت والا ہائیڈرو پاور اسٹیشن، این ایچ پی سی کا 520 میگاواٹ کی صلاحیت والا پاورتی پروجیکٹ اور ایس جے وی این ایل کا 412 میگاواٹ کی صلاحیت والا رامپور ہائیڈرو اسٹیشن شامل ہیں۔ اس موقع پر ملک کی ترقی میں سرکاری شعبے کی کمپنیوں کے تعاون کی ستائش کرتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی نے کہا کہ ان پن بجلی پروجیکٹوں سے ریاست ہماچل پردیش اور ملک کے دیگر حصوں میں خوشحالی آئے گی۔ این ایچ پی سی کا پاروتی۔111 پاور اسٹیشن اس ندی اسکیم کا حصہ ہے جس میں 43 میٹر اونچا راک فل ڈیم، زیر زمین پاور ہاؤس اور 10.58 کلو میٹر طویل واٹر کنڈکٹر سسٹم شامل ہے۔
مجموعی طور پر 326 میٹر نیٹ ہڈ کا استعمال 4 عمودی فرانسس ٹربائنوں کو چلانے کیلئے کیا جاتا ہے جس کی تنصیبی صلاحیت 520 میگاواٹ (4×130 میگاواٹ) ہے۔اس پاور پلانٹ کا ڈیزائن سالانہ 1963.29 ملین یونٹ بجلی پیدا کرنے کیلئے تیار کیا گیا ہے۔ پاروتی۔111 پاور اسٹیشن سے جو بجلی تیار ہوتی ہے، اسے جن ریاستوں میں تقسیم کیا جاتا ہے ان میں ہماچل پردیش، جموں وکشمیر، پنجاب، اتراکھنڈ، اترپردیش، ہریانہ، دہلی، راجستھان اور مرکز کے زیر انتظام علاقہ چنڈی گڑھ شامل ہیں۔
یہ پاور اسٹیشن ہوم اسٹیٹ کو 13 فیصد بجلی سپلائی کرتا ہے جس میں سے 12 فیصد ہوم اسٹیٹ حصے کے طور پر اور ایک فیصد لوکل ایریا ڈیولپمنٹ فنڈ کے طور پر سپلائی کیا جاتا ہے۔ اس پروجیکٹ کے تکمیل پر آنے والی لاگت تقریباً 2600 کروڑ روپے ہے اور 30 ستمبر 2016 تک اس سے مجموعی طور پر 1880 ملین یونٹ بجلی تیار کی جارہی تھی اور جس سے 818 کروڑ روپے کا روینیو حاصل ہورہا تھا۔ 200 میگاواٹ کی صلاحیت والی 4 اکائیوں کے ذریعے بجلی کی پیداوار شروع کردینے کے ساتھ ہی این ٹی پی سی۔ کولڈیم نے 800 میگاواٹ کی صلاحیت حاصل کرلی ہے اور یہ شمالی گرڈ کو اپنی خدمات دستیاب کرارہاہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Prime minister dedicates three hydro projects to the nation in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply