اچھا ہے راہل گاندھی نے بولنا شروع کر دیا ،اب زلزلہ نہیں آئےگا:وزیر اعظم مودی

وارانسی:وزیر اعظم نریندر مودی نے نوٹوں کی منسوخی کی مخالفت کرنے والی سیاسی جماعتوں اور لیڈروں پر ’پاکستان کی طرح‘ حکمت عملی اختیار کرنے اور بے ایمانوں کو بچانے کے لئے”سیاسی تحفظ“ فراہم کرنے کا الزام لگایا۔ مسٹر مودی نے آج اپنے پارلیمانی حلقہ وارانسی میں واقع کاشی ہندو یونیورسٹی (بی ایچ یو) کے سوتنترتا بھون آڈیٹوریم میں منعقد کلچرل فیسٹیول سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان دراندازوں کو بھیجنے کے لئے سرحد پر فائرنگ شروع کر دیتا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہہماری فوج ادھر مصروف ہو جاتی ہے اور دہشت گرد لپک کر گھس جاتے ہیں۔پاکستانی فوج دراندازوں کو’کور‘ دیتی ہے۔ٹھیک اسی طرح بے ایمانوں کو بچانے کے لئے اپنے ملک میںسیاسی تحفظ دیا جا رہا ہے۔ انہوں نے طنزیہ انداز میں کہا کہ جیب کترا جیسے ہی پاکٹ مار تا ہے، اس کے ساتھی پولیس اور وہاں موجود لوگوں کی توجہ بھٹکانے کے لئے دوسری طرف چور چور کا شور مچاتے ہیں۔ پولیس کی توجہ ہٹتے ہی جیب کترا نکل جاتا ہے۔ بے ایمانوں کو بچانے کے لئے نہ جانے کیسی کیسی ترکیبیں اختیار کی جا رہی ہیں۔مسٹر مودی نے کہا ”میں نے سوچا بھی نہیں تھا کہ کچھ سیاسی لیڈر اور کچھ سیاسی پارٹیاں بے ایمانوں کے ساتھ کھڑے ہو جائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ مودی جی نے اتنا بڑا فیصلہ کر لیا، انہیں یہ اندازہ ہی نہیں تھا کہ اس میں اتنی دقتیں آئیں گی۔ انہوں نے کہا کہ مشکلات کا تو اندازہ تھا لیکن ایک چیز کا اندازہ نہیں تھا کہ کچھ لوگ بے ایمانوں کی طرف سے کھڑے ہو جائیں گے۔ وزیر اعظم نے کانگریس نائب صدر راہل گاندھی کا نام لئے بغیر طنز کرتے ہوئے کہا کہ ایک نوجوان لیڈر اب بھی تقریر سیکھ رہے ہیں۔ جب سے انہوں نے بولنا شروع کیا تب سے میں بہت خوش ہوں کیونکہ 2009 سے قبل پتہ ہی نہیں چلتا تھا کہ اس پیکٹ میں کیا ہے۔ اب پتہ چل رہا ہے۔ اچھا کیا انہوں نے بولنا شروع کر دیا ملک زلزلہ سے بچ گیا ۔انہوں نے کہا کہ”نوجوان لیڈر“ کہتے ہیں کہ جس ملک میں 60 فیصد ناخواندہ ہوں وہاں مودی جی کیش لیس نظام کیسے نافذ کرپائیں گے۔ انہوں نے سوال کیا کہ 60 فیصد ناخواندہ کی بات کرکے مسٹر گاندھی کس کا رپورٹ کارڈ پیش کر رہے ہیں۔ملک میں سب سے زیادہ وقت تک انہیں کے خاندان نے حکومت کی ہے تو ناخواندہ لوگوں کی اتنی تعداد کیسے رہ گئی۔وزیر اعظم نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی کے بعد عوام نے بڑی تکلیف جھیلی ہے۔ تکلیف کے باوجود ملک ایمانداری کی طرف چل پڑا ہے۔ آٹھ آٹھ گھنٹے قطار میں کھڑے ہو کر بھی عوام اف تک نہیں کر رہے کیونکہ وہ بدعنوانی کو مکمل خاتمہ ہوتے دیکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سیاستدانوں کو سمجھنا چاہئے کہ لوگ اپنے مفاد کے لئے نہیں بلکہ ملک کی فلاح و بہبود کے لئے قطار میں کھڑے ہیں۔ بدعنوانی کے خلاف چل رہی مہم میں کسی کا سیاہ دل کھل رہا ہے تو کسی کا کالا دھن کھل رہا ہے۔ انہیں یقین ہے کہ ملک تپ کرکندن بن کر نکلے گا۔ مسٹر مودی نے نوجوانوں پر زور دیا کہ کالا دھن کی صفائی تو ہو رہی ہے لیکن یہ پھر سے نہ پیدا نہ ہو اس میں وہ تعاون کریں۔ بدعنوانی اور کالا دھن کو پنپنے سے روکنے کے لئے کیش لیس انتظام ضروری ہے۔ موبائل فون سے کیش لیس انتظام ممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ جعلی نوٹ تو آٹھ نومبر کو ہی دفن کر دیے گئے۔ نوٹوں کی منسوخی کی وجہ سے دہشت گردی اور نکسل ازم کی کمر ٹوٹ گئی۔ نکسلی اب خودسپردگی کر رہے ہیں۔ خود اعتماد ی سے بھرے مسٹر مودی نے کہا، “جن ارادوں کے تعلق سے ملک ہمارا ساتھ دے رہا ہے اسے ہم نہیں چھوڑیں گے۔ ملک کے عوام کے اعتماد پر ہر حال میں کھرے اتریں گے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Pm modi in varanasi good that he rahul started speaking now no chance of quake in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply