اترپردیش اور بہار کے لوگوں پر حملوں کے بعد گجرات سے غیر گجراتیوں کی نقل مکانی شروع

احمد آباد: گذشتہ ہفتہ گجرات کے سابر کانٹھا ضلع کے ہمت نگر میں ایک14ماہ کی بچی سے مبینہ طور پر ریپ کرنے کے الزام میںبہار کے ایک نوجوان کی گرفتاری کے بعد گجرات میں مقیم غٰیر گجراتیوں خاص طور پر اترپردیش اور بہار کے لوگوں پر حملے شروع ہوگئے ہیں۔

ریاست کے ڈائریکٹر جنرل پولس(ڈی جی پی) شیوا نند جھا کے مطابق گاندھی نگر، مسانہ، سابر کانٹھا ،پٹن اور احمد آباد اضلاع میں غیر گجراتیوں پر حملوں کی اطلاعات مل رہی ہیں۔ انہوں نے مزید بتایاکہ اترپردیش اور بہار کے لوگوں کے خلاف ایک میسج وائرل ہونے کے بعد تشدد کی وارداتوں میں اور اضافہ ہوگیا۔

تشدد کی وارداتوں کے پیش نظر غیر گجراتی علاقوں میں پولس کا گشت بڑھا دیا گیا ہے۔رپورٹ کے مطابق 28ستمبر کو احمد آباد سے100کلو میٹر کی دوری پر واقع سابر کانٹھا کے ہمت نگر قصبہ کے قریب واقع ایک گاو¿ں میں ایک14ماہ کی بچی کا مبینہ طور پر ریپ ہوا تھا۔

یہ بچی اعلیٰ ذات کے ٹھاکر طبقہ کی تھی۔ پولس کے مطابق ریپ کے الزام میں چینی مٹی کے برتن بنانے والی ایک مقامی فیکٹری میں ملازمت کرنے والے رویندر ساہو نام کے ایک لڑکے کو جو بہار کا رہائشی ہے، واردات والے دن ہی گرفتار کر لیا۔

جن غیر گجراتیوں کو نشانہ بنایا گیا ان میں سے ایک نے دعویٰ کیا کہ غیر گجراتیوں نے گجرات سے بھاگنا شروع کر دیا ہے۔اس نے بتایا کہ جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب میں گاندھی نگر کے کالول علاقہ میں ٹھاکر سینا نے ہم پر حملہ کر دیا۔اسی لیے ہمارے پاس اسکے علاوہ کوئی چارہ نہیں رہ گیا کہ ہم اپنے وطن ہی واپس چلے جائیں۔کیونکہ اب گجرات میں خود کو مکمل طور پر غیر محفوظ محسوس کر رہے ہیں۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Outsiders attacked across gujarat after 14 month old girls rape in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply