اے ٹی ایم سے چھوٹے نوٹ نہ نکلنے کے باعث پریشانیاں اور بڑھیں

نئی دہلی:بڑے نوٹ بند ہوجانے سے پریشانیاں ہیں کہ کم ہونے میں نہیں آرہیں۔ اور عام زندگی اجیرن ہو گئی ہے۔ مہینے کی30تاریخ کو جبکہ عام طور پر تنخواہیں بینک کھاتوں میں آجاتی ہیں قومی دارالحکومت میں بینکوں اور اے ٹی ایم پر لوگوں کی لمبی لائنیں لگیں اور لوگ نقد رقم کی کمی اور پیسہ نکالنے کی مقرر کی حد کے مسئلے سے پریشان نظر آئے۔ وی آئی پی علاقوں کرشی بھون، شاستری بھون، ریل بھون، پارلیمنٹ اسٹریٹ میں واقع اسٹیٹ بینک اور دیگر بینکوں کی شاخوں اور اے ٹی ایم پر لوگ لمبی قطاروں میں نظر آئے۔ اگرچہ بہت سے اے ٹی ایم میں رقم نہیں تھی پھر بھی لوگ اس انتظار میں اس کے اطراف منڈلا رہے تھے کہ اے ٹی ایم میں رقم ڈالی جائے گی۔
پریس کلب میں واقع سنٹرل بینک کے اے ٹی ایم کا توشٹر ہی گرا ہوا تھا۔ دوپہر تک پارلیمنٹ کی عمارت میں نصب دو اے ٹی ایم میں بھی نقد رقم نہیں تھی۔ اسٹیٹ بیک کے ملازمین کا کہنا تھا کہ دوپہر بعد پارلیمنٹ ہاؤس کے اے ٹی ایم میں کیش ڈالا جائے گا۔ لیکن شام تک نہیں ڈالی گئی۔کرشی بھون اور شاستری بھون کے اے ٹی ایم میں لوگوں کی لمبی لائن تھی جو شام کے ڈھلتے ڈھلتے کچھ کم ہو رہی تھی۔ کانسٹیٹیوشن کلب میں اے ٹی ایم کے کام نہ کرنے کی وجہ سے وہاں موبائل اے ٹی ایم نصب کیا گیا تھا جہاں لوگوں کی بھاری بھیڑ تھی۔ اے ٹی ایم سے صرف 2000 اور 2500 روپے نکلنے سے لوگ پریشان تھے اور ماہانہ گھریلو خرچ چلانے کے لئے درپیش پریشانیوں کا رونا رو رہے تھے۔
یہی نہیں لوگ اے ٹی ایم سے 2000 اور 500 روپے کے ہی نوٹ نکلنے سے بھی پریشان تھے کیونکہ انہیں چھوٹے نوٹوں میں تبدیل کرنے میں بہت دشواریاں پیش آرہی ہیں۔ وزیر قانون روی شنکر پرساد نے پارلیمنٹ کی عمارت کے احاطے میں نوٹ منسوخی مسئلہ کے بارے میں پوچھے جانے پر کہاکہ بڑے نوٹ کی منسوخی کے بعد کی صورت حال درد زہ جیسی ہے۔ لیکن ولادت ہوتے ہی نومولود کی قلقاریوں سنتے ہی اس تکلیف کا احساس فنا ہوجاتا ہے ۔بس تھوڑا انتظار کریں۔ ملک ڈلیوری کا انتظار کر رہا ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: No respite from long queues before atms in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply