بی جے پی نے جنرل راوت کے تقرر پر حزب اختلاف کے اعتراض کو خارج کر دیا

نئی دہلی:کانگریس اور دیگر اپوزیشن جماعتوں کی تنقید کو مسترد کرتے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) نے لیفٹیننٹ جنرل بپن راوت کی نئے فوجی سربراہ کی حیثیت سے تقرری کو صحیح ٹھہراتے ہوئے کہا کہ اس فیصلے میں مکمل شفافیت برتی گئی ہے اور تقرری کے طریقہ کار پر عمل کیا گیاہے۔ بی جے پی کے قومی سکریٹری سدھارتھ ناتھ سنگھ نے کہا کہ لیفٹیننٹ جنرل بپن راوت نائب فوجی سربراہ ہیں اور ان کو فوج کے سربراہ بنانے میں شفافیت برتی گئی ہے اور تقرری کے طریقہ کار پر عمل کیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ حزب اختلاف خاص طور سے کانگریس ہر بات پر سیاست کرنا چاہتی ہے۔ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ فوجی سربراہ کی تقرری کے عمل پر بھی سیاست کی جا رہی ہے۔ بی جے پی لیڈر نے کہا کہ سینئرٹی کی خلاف ورزی کا معاملہ نیا نہیں ہے۔ اس سے پہلے سال 1983 میں لیفٹنیٹ جنرل ایس کے سنہا کی سینئرٹی کو نظر انداز کیا گیا تھا۔ بی جے پی لیڈر نے کانگریس پر الزام لگایا کہ وہ اصل امور پر بحث کرنے سے بچتی ہے اور میڈیا میں آنے کے لئے معاملہ کو اٹھاتی ہے۔واضح رہے کہ مودی حکومت نے فضائیہ اور فوج کے نئے سربراہوں کی تقرری کے سلسلے میں گزشتہ کچھ عرصے سے جاری قیاس آرائیوں کو ختم کرتے ہوئے ہفتہ کی شب ایئر مارشل بی ایس دھنووا کو فضائیہ کااور لیفٹیننٹ جنرل وپن راوت کو بری فوج کا سربراہ مقرر کرنے کااعلان کر دیا تھا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: No politics in army chief appointment says bjp in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply