نربھیا زانیوں کو پھانسی دی جائے گی، سپریم کورٹ نے سزائے موت کی توثیق کر دی

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے دارالحکومت کے نربھیا اجتماعی جنسی زیادتی کیس میں چاروں مجرموں کی پھانسی کی سزا برقرار رکھی۔ جسٹس دیپک مشرا، جسٹس آر بھانومتی اور جسٹس اشوک بھوشن پر مشتمل تین ججی بنچ نے دہلی ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف چاروں مجرموں مکیش، پون، ونے اور اکشے کی اپیل ٹھکراتے ہوئے پھانسی کی سز ا کی توثیق کر دی۔ کورٹ نے نربھیا کے ساتھ ہونے والی وحشیانہ حرکت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ یہ سنگین جرم تھا اور ایسے وحشیانہ اور بہیمانہ جرائم شاذ و نادر ہی سننے اور دیکھنے میں آتے ہیں ۔اس لیے اس معاملہ کوریرسٹ آف دی ریر(انتہائی شاذ و نادر) کے زمرے میں رکھا جانا مناسب ہے۔
اس ضمن میں تینوں ججوں میں اتفاق رائے تھا اور متفقہ طور پر ہائی کورٹ ے فیصلہ کو درست قرار دیا گیالیکن جسٹس بھانومتی نے اس معاملے میں الگ سے اپنا حکم سنایا۔ وکلاءاور میڈیا سے کھچا کھچ بھرے کمرہ عدالتمیں نربھیا کے والدین بھی موجود تھے۔ دارالحکومت کی ایک سریع الحرکت عدالت نے نربھیا کیس کے چاردں ملزمان کو مجرم قرار دیتے ہوئے پھانسی کی سزا سنائی تھی، جسے دہلی ہائی کورٹ نے 14 مارچ 2014 کو برقرار رکھا تھا۔ ان چاروں کے علاوہ ایک ملزم رام سنگھ نے تہاڑ جیل میں ہی خود کشی کر لی تھی، جبکہ ایک دیگرنابالغ ملزم کو بچہ عدالت نے اصلاح خانہ (بچہ جیل) بھیج دیا تھا۔
اس نے اصلاح گھر میں سزا کے اپنے تین سال پورے کر لئے ہیں۔ قصورواروں کی اپیل پر سپریم کورٹ نے پھانسی کی سزا پر روک لگا دی تھی۔ اس کے بعد تین ججوں کی بینچ کو یہ معاملہ بھیج دیا گیا تھا۔ کورٹ نے اپنی معاونتکے لئے دو معاونینمقرر کئے تھے۔

Title: nirbhaya rapists to hang as supreme court upholds death sentence | In Category: ہندوستان  ( india )

Leave a Reply