مسلمان فیصلے کا احترام جبکہ لیڈران ماحول خراب کرنا چاہتے ہیں

نئی دہلی:(پریس ریلیز)تقریبا ً ڈیڑھ سو سال سے چلے آ رہے بابری مسجدو رام مندر تنازعہ ہفتہ کے روز عزت مآب سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اختتام پذیر ہوگیا۔ جس کی تمام ہندستان بھر کے لوگوں نے خیر مقدم کیا ہے۔

اور اس بات کی پہلے سے تمام حب الوطنی کا جذبہ رکھنے والے لوگ وعدہ کرچکے تھے کہ فیصلہ کچھ بھی آئے ہم اس کا دل سے احترام کریں گے۔

لیکن فیصلہ آنے کے فورا بعد کچھ سیاسی جماعتیں سپریم کورٹ کے خلاف کھڑے ہوکر اپنی بدنیتی اور ملک کے گنگا جمنی تہذیب میں گندگی پھیلانے کا کام کرنے پر تلے ہوئے ہیں۔

لہذا تمام ملک کے عوام سے اپیل کے ساتھ اطلاع ہے کہ عام لوگ بلا تفریق مذہب وملت عزت مآب سپریم کے فیصلے کا احترام کرتے ہوئے کسی بھی غلط افواہ میں نہ آنے کی تلقین کرتے ہیں۔

چونکہ ہمارا ملک ہندستان کثیر لسانی اور دنیا کے تمام مذاہب کے ماننے والوں کا ملک ہونے کا وقار رکھتا ہے۔ لہذا ہمیں ایک دوسرے کے ہر جذبے کا احترام کرنا لازم ہے۔

اس کے علاوہ جو بھی فیصلہ آیا ہے اس میں ایک لمبے وقفے تک کورٹ میں معاملہ میں زیر التوا رہنے کے بعد جانچ ایجنسیوں کا سہارا لے کر یہ قدم عزت مآب سپریم کورٹ نے اٹھایا ہے ، لہذا کسی بھی طرح کے افواہ میں کسی بھی برادران وطن کو آنے کی ضرورت نہیں ہے۔

ہم تمام ملک بھر کے باشندے ایک تھے ، ایک ہیں اور ہی رہیں گے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Muslims welcome sc verdict on ayodhya but in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.