سپریم کورٹ نے شہاب الدین کی پٹنہ ہائی کورٹ سے ملنے والی ضمانت رد کردی

نئی دہلی: (یو این آئی) سپریم کورٹ نے راشٹریہ جنتا دل (آر جے ڈی) کے لیڈر اور سابق ممبر پارلیمنٹ محمد شہاب الدین کو سخت جھٹکا دیتے ہوئے پٹنہ ہائی کورٹ سے ملنے والی اس کی ضمانت آج رد کردی اور اسے فوراً حراست میں لے کر جیل بھیجنے کا بہار حکومت کو حکم دیا۔ بعدازاں شہاب الدین نے پولیس کو چمکہ دے کر بہار میں سیوان کی عدالت میں خودسپردگی کردی۔
جسٹس پناکی چندر گھوش اور جسٹس امیتابھ رائےکی بنچ نے اپنے مختصر حکم میں کہا کہ معاملےمیں تمام باتوں پر غور کرنے کے بعد وہ شہاب الدین کو ضمانت پر رہا کرنے سے متعلق پٹنہ ہائی کورٹ کے حکم کو رد کرتی ہے۔ بنچ نے مزید کہا، شہاب الدین کو فوراً حراست میں لیا جائے اور واپس جیل بھیجا جائے۔ بنچ نے ذیلی عدالت کو بھی ہدایت دی کہ وہ شہاب الدین کی ضمانت رد کرانےکیلئے سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹانے والے چندر کیشور پرساد عرف چندہ بابو کےبیٹے راجیو روشن کے قتل کے مقدمے کا فوری طور پر تصفیہ کرے۔ اس قتل کے معاملے میں بھی شہاب الدین ملزم ہے۔ عدالت نے کہا، ریاستی (بہار) حکومت اس عدالت کے حکم پر عمل کرنے کیلئے ہر ضروری کوشش کرے بنچ نے تمام متعلقہ فریقوں کے دلائل کی سماعت کے بعد کل اپنا فیصلہ محفوظ رکھ لیا تھا اور فیصلہ سنانے کیلئے آج کی تاریخ مقرر کی تھی۔
راجیو روشن اپنے دو بھائیوں کے قتل اور اسے تیزاب میں ڈالنے کے وحشیانہ واقعہ کا واحد چشم دید گواہ تھا جس کو شہاب الدین کے غنڈوں نے اس وقت قتل کردیا تھا جب وہ دونوں بھائیوں کے قتل کےمعاملے کی سماعت میں گواہی دینے جا رہا تھا۔ چندہ بابو کی جانب سے معروف وکیل پرشانت بھوشن نے پیروی کی۔پٹنہ ہائی کورٹ نے گزشتہ سال ستمبر کو راجیو روشن قتل معاملے کےملزم شہاب الدین کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔ جس کےبعد اسےبھاگلپور جیل سے رہا کیا گیا تھا۔ چندہ بابو نے 45 سے زیادہ مجرمانہ معاملے کےملزم شہاب الدین کو ضمانت پر رہا کئے جانے کے خلاف سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا، بعد میں سیاسی دباؤ کے سبب بہار حکومت نے بھی ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف اپیل کی تھی۔ حالانکہ معاملوں کی سماعت کے دوران عدالت عظمی نے بہار حکومت کی لاپروائی پر سخت پھٹکار لگائی تھی۔ عدالت نےکہا تھا کہ ریاستی حکومت نے اس سے قبل اپیل کیوں نہیں کی تھی؟
مسٹر بھوشن نے دلیل دی تھی کہ اگر شہاب الدین جیل سے باہر رہا تو گواہ کئی معاملوں میں آر جےڈی کے لیڈر کے خلاف گواہی نہ دے پائیں گے اور وہ دہشت زدہ رہیں گے۔ شہاب الدین کی جانب سے بحث کر رہےسینئر وکیل شیکھر نافڈے نےدلیل دی تھی کہ فرد جرم میں ان کے موکل کو ملزم نہیں بنایا گیاہے۔ انہوں نے کہاکہ استغاثہ کے فرد جرم اور ضمنی فرد جرم میں بھی کمی پائی گئی ہے۔ مسٹر نافڈے نے سوال کیا تھا کہ شہاب الدین سے متعلق فرد جرم کو عدالت کو کیوں نہ پیش کیا گیا۔ ان کے موکل کو بے وجہ سیوان جیل سے بھاگلپور جیل بھیجا گیا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Mohammad shahabuddin back in jail as sc cancels bail in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply