ثابت ہو گیا کہ اگنی ویش پر حملہ بھاجپا، آر ایس ایس اور بجرنگ دل نے ہی کیا تھا

رانچی: گذشتہ منگل کو سماجی کارکن سوامی اگنی ویش پرجھارکھنڈ کے پاکور شہر میں ، جہاں بھارتیہ جنتا یووا مورچہ (بی جے وائی ایم) سوامی کے دورے کے خلاف احتجاج کر رہا تھا، ایک مشتعل بھیڑ کے حملہ کے فوراً بعد بی جے پی کے اس یوتھ ونگ کے ریاستی صدر امیت سنگھ نے دعویٰ کیا تھا کہ ان کی تنظیم کا کوئی کارکن اس حملہ میں شامل نہیں تھا۔

لیکن انگریزی روزنامہ انڈین ایکسپریس کے مطابق اس معاملہ کی ایف آئی آر میں جن 8افراد کا نام دیا گیا ہے ان کا براہ راست تعلق بی جے وائی ایم ، بی جے پی اور اس سے وابستہ تنظیموں یا آر ایس ایس سے ہے۔اور اگنی ویش کے خلاف بغض و کینہ اور غصہ کا جو لاوا پک رہا تھا وہ ان کی قبائلی آبادی تک رسائی کے باعث پاکور میں ابل پڑا۔

بی جے وائی ایم پاکور کے سربراہ پرسن مشرا نے، جن کا نام یاف آئی آر میں درج ہے، کہا کہ اگنی ویش مسلسل ایسے بیانات جاری کر رہے تھے جو قوم پرستی کی اصل روح کے منافی تھے۔وی نکسلیوں کی حمایت رکتے ہیں۔ وہ پتھل گڑھی کی حمایت کرتے ہیں اور اگنی ویش چرچ کے ایجنٹوں کی ایماءپر قبائلیوں کو اکسانے کے لیے یہاں آئے تھے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Meet the men who beat up swami agnivesh bjp rss bajrang dal in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply