کیرل لوو جہاد کیس: سپریم کورٹ نے ہادیہ کو عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیا

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ کیرل میں ایک ہندو لڑکی کے مسلمان لڑکے سے نکاح کے ایک مقدمہ میںاکھیلا اشوکن عرف ہدیہ (تبدیلی مذہب کے بعد کانام) کو 27 نومبر کو عدالت میں پیش کیا جائے۔چیف جسٹس جسٹس دیپک مشرا، جسٹس اے ایم کھانولکر اور جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی بنچ نے مسلم نوجوان شافعین کی عرضی پر مدعا علیہ کے ایم اشوکن کو، جو لڑکی کا باپ ہے حکم دیا کہ وہ 27 نومبر کو آئندہ سماعت کے دوران لڑکی ہدیہ کو پیش کرے تاکہ عدالت لڑکی کا موقف جان سکے کہ اس نے ایک مسلمان لڑکے سے کیوں اور کن حالات میں شادی کی۔ عدالت نے کہا کہ لڑکی بالغ ہے اور اس معاملے میں اس کا موقف بھی جاننا ضروری ہے۔
لہٰذا عدالت ہدیہ کے موقف کو بھی کھلی عدالت میں سنناچاہتی ہے۔ سپریم کورٹ نے ہدیہ کے والد کو ہدایت کی کہ سماعت کی اگلی تاریخ کو وہ اپنی بیٹی کو اس کے سامنے پیش کریں۔ تاکہ وہ اپنا موقف عدالت کے سامنے رکھ سکے۔ینچ نے سماعت کے دوران قومی تحقیقاتی ایجنسی کی بھی سخت سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ ملک کا کوئی قانون کسی لڑکی کوکسی مجرم سے محبت کرنے سے نہیں روک سکتا۔ اگر لڑکی بالغ ہے تو صرف اس کی اجازت ہی ضروری ہے۔واضح رہے کہ مئی میں کیرل ہائی کورٹ نے ہادیہ کی شادی باطل قرار دے کر اسے کوتائم میں اپنے والدین کے ساتھ رہنے کا حکم دیا تھا۔اس عدالتی فیسلہ کو شافعین نے سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Kerala love jihad case consent of girl is prime observes supreme court in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply