منافرت پھیلانے والی تقریر کرنے والے وزیر پر حزب اختلاف کی کڑی تنقید

نئی دہلی: پارلیمنٹ میں حزب اختلاف کے اراکین نے اتر پردیش کے شہر آگرہ میں ایک وی ایچ پی لیڈر کے تعزیتی جلسہ میں منافرت پھیلانے والی تقریر کرنے پر بی جے پی کے مرکزی وزیر تعلیم رام شنکر کٹھیریا کو آڑے ہاتھوں لیا اور انہیں خوب صلواتیں سنائیں۔
واضح رہے کہ پولس نے اشتعال انگیز تبصرے کرنے پر تین افراد کے خلاف پولس نے ایف آئی آر درج کر لی لیکن کٹھیریا کا نام اس ایف آئی آر میں نہیںدیا گیا۔کانگریس نے الزام لگایا کہ کٹھیریا کی زہریلی تقریر اس امر کی غماز ہے کہ بی جے پی اور آر ایس ایس نے فرقہ وارانہ تقسیم کے ایجنڈے پر ،خاص طور پر ایسے وقت میں جب انتخابات سر پر ہوں،کام شروع کر دیا ہے ۔
دوسری جانب آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے رہنما اسد الدین اویسی نے کہا کہ اب این ڈی اے حکومت کا اصلی ایجنڈا بے نقاب ہو گیا ہے۔ سماجی کارکنوں نے کٹھیریا اور بی جے پی کے ممبر پارلیمنٹ بابو لال کی اشتعال انگیز تقریر وںکے خلاف نئی دہلی کے جنتر منتر پر احتجاج کیا ۔لیکن جونیر وزیر تعلیم نے دعویٰ کیا کہ انہوں نے اپنی تقریر میں کسی مخصوص فرقہ کا نام نہیں لیا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Katheria slammed for alleged hate speech in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply