کرناٹک میں بچہ اغوا کرنے کی افواہ سے ہجومی تشدد، سافٹ ویر انجینئر ہلاک ،تین شدید زخمی

بیدر (کرناٹک):کرناٹکم کے بیدر ضلع کے مرکی گاؤں میں بچہ اغوا کرنے کی افواہ پر مشتعل ہجوم نے حیدر آباد کے رہائشی چار نوجوانوں کر بے دردی سے پیٹ پیٹ کر ادھ مرا کر دیا۔

ان میں سے ایک محمد اعظم نام کے نوجوان کی جو کہ حیدر آباد میں ہی گوگل کاسافٹ ویر انجینیر تھا،موقع پر ہی موت ہو گئی جبکہ تین زخمیوں کو جن میں ایک قطری شہری تھا حیدرآباد کے اسپتال میں داخل کر دیا گیا۔

یہ چاروں دوست جن کے نام محمد اعظم،سلمان ،اکرم اور صلہم عیزل قبوسی نام کا قطری شہری بیدر میں اپنے ایک دوست بشیر کے گھر دوپہرکا کھانا کھا کر حیدرآباد واپس جارہے تھے کہ راستے میں ایک گاؤں میں بچوں کو کھیلتا دیکھ کر انہوں نے کار روکی اور قبوسی نے ان بچوں کو چاکلیٹیں بانٹنا شروع کر دی۔

یہ دیکھ کر کسی نے واٹس اپ پر تصویر اپ لوڈ کر عام کر دی اور کیپشن میں لکھا کہ یہ بچہ چور گروہ کے لوگ ہیں۔ بس پھر کیا تھا دیکھتے ہی دیکھتے گاؤں والوں کی بھیڑ جمع ہو گئی۔ بھیڑ کو اپنی طرف بڑھتے دیکھ کر یہ چاروں کار میں گھس کر تیزی سے وہاں سے نکل پڑے لیکن اس دوران ان کے بھاگنے کی تصویر بھی واٹس اپ پر ڈا ل کو اگلے گاؤں والوں کوبھی مطلع کر دیا گیا اور انہوں نے ایک سڑک پر درخت سے رکاوٹ کھڑی کر دی۔

ان لوگوں نے پیڑ کے دائیں جانب سے کار نکالنے کی کوشش کی تو کار گڈھے میں جا گری اور گاؤں والوں نے انہیں کار سے نکال کر مبینہ طور پر بری طرح زدو کوب کیا۔ پولس نے مداخلت کی تو ہجوم نے اسے بھی نہیں بخشا اور ایک پولس سب انسپکٹر اور ایک کانسٹبل زخمی ہوگیا۔

تاہم پولس کسی طرح ہجوم کو منتشر کرکے چاروںکو بیدر کے ایک اسپتال لے گئی جہاں پہنچنے سے پہلے ہی اعظم دم توڑ چکا تھا اور باقی تین کی حالت بھی تشویشناک تھی اس لیے انہیں حیدرآباد منتقل کر دیا گیا۔پولس نے اس معاملہ میں واٹس اپ کے ایڈمن سمیت32افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Karnataka mob lynching software engineer beaten to death in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply