جج لویا کی موت کی تحقیقات ایس آئی ٹی سے کرائی جائے اور سی بی آئی کو دور رکھا جائے : کانگریس

نئی دہلی: کانگریس نے جج برج موہن لویاکی موت کے معاملہ میں ایف آئی آر درج نہ ہونے پرسوال اٹھائے ہیں۔ کانگریس لیڈر کپل سبل نے معلوم کیا کہ آخر جج لویا کی بہن کے بیان پر عدالت نے از خود نوٹس کیوں نہیں لیا؟ معاملہ میں ایف آئی آر کیوں درج نہیں کرائی گئی۔
انہوں نے یہ بھی کہا کہ معاملہ کی تحقیقات ایس آئی ٹی سے کرائی جائے اور سی بی آئی این آئی اے کو اس کیس کی تحقیقات سے دور رکھا جائے۔کپل سبل نے کہا کہ جج لویا کسی سیکورٹی کے بغیر ناگپورگئے تھے۔حالانکہ وہ اس وقت سی بی آئی جج تھے۔
کانگریس لیڈر نے کہا کہ ناگپور کے روی بھون گیسٹ ہاؤس کے رجسٹر میں صرف سری کانت کلکرنی کانام تھا۔لیکن جج برج موہن لویااور سری رام مدھو سوڈن موڈک کا کوئی ریکارڈ نہیں ملا۔
انہوں نے کہا کہ جب جج لویا اور موڈک کا روی بھون میںقیام کرنے کا کوئی ثبوت ہی نہیں ہے توآخر وہ وہاںکیوں ٹہرے تھے۔کپل سبل نے بتایا کہ یہ گیسٹ ہاؤس کا یہ رجسٹر 2014کا ہے اور اندراج 2017میں کیاگیا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Kapil sibal says judge loyas death must be probed congress will collaborate if sc sets up sit in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply