داعش سے تعلق رکھنے کے شبہ میں گرفتار چھ انتہا پسندوں کا کیس این آئی اے کو منتقل

دہلی :پولس نے ایک مقامی عدالت کو بتایا ہے کہ گرفتار کیے گئے 6مشتبہ دہشت گردوں کا کیس ، جن کا تعلق مبینہ طور پر خونخوار دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ فی العراق و الشام (داعش) سے ہے،دہلی پولس کے اسپیشل سیل سے قومی تحقیقاتی ادارے (این آئی اے) کو منتقل کر دیا گیا۔
پولس نے ایڈیشنل سیشن جج رتیش سنگھ کو مطلع کیا کہ چونکہ این آئی اے داعش کے انتہا پسندوں کے حوالے سے ایک کیس کی پہلے ہی سے تحقیقات کر رہاہے اس لیے یہ معاملہ بھی مزید تفتیش کے لیے این آئی اے کو سونپ دیا گیا ۔گرفتار کیے جانے والے 6میں سے پانچ محسن ابراہیم سید، اخلاق الرحمٰن ، محمد عثمان، محمد عظیم شاہ اور مہروز کو عدالتی تحویل کی میعاد ختم ہوجانے کے بعد عدالت میں پیش کیا گیاتھا۔
عدالت کو یہ بتائے جانے کے بعد کہ کیس این آئی اے منتقل کر دیا گیا ہے جج نے کہا کہ تب ان ملزموںکو متعلقہ عدالت میں پیش کیا جائے۔لہٰذا ملزموں کو اسپیشل این آئی اے عدالت میں پیش کیا گیا جہاں ان کی عدالتی تحویل میں 12اپریل تک توسیع کر دی گئی۔چھٹے ملزم مدبر مشتاق شیخ کو جیل سے عدالت نہیں لایا گیا اور جج نے آئندہ سماعت پر اس کی حاضری کے وارنٹ جاری کر دیے۔یاد رہے کہ گذشتہ دنوںپولس کے اسپیشل سیل نے داعش سے سے تعلق رکھنے کے شبہ میں اترا کھنڈ میں منگلور سے چار افراد کو گرفتار کر کے ہردوار میں ہونے والے اردھ کنبھ میلے میں دہشت گردانہ حملے کے ساتھ ساتھ قومی دارالخلافہ میں بھی کئی اہم مقامات پر حملوں کی سازش بے نقاب کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔
پولس کے مطابق ان میں سے ایک ابرہیم سید فنانسر کے طور پر ساتھ دے رہا تھا اور اس نے اخلاق، اسامہ ، شاہ اور مہروز کو 50ہزار روپے دیے تھے۔ پولس کے دعوے کے مطابق ملزموں کا انڈین مجاہدین کے ایک سابق انتہا پسند سے ، جو بعد میں داعش کی طرف سے لڑنے کے لیے چلا گیا تھاتعلقات تھے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Judicial custody of six suspected terror operatives extended till april 12 in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply