جے این یو اسٹوڈنٹس لیڈ رعمر خالد قاتلانہ حملہ میں بال بال بچے

نئی دہلی: یوم آزادی سے دوروز قبل جواہر لعل نہرو یونیورسٹی (جے این یو ) کے اسٹوڈنٹس لیڈر عمر خالد قاتلانہ حملہ میں اس وقت بال بال بچ گئے جب پارلیمنٹ کے قریب کانسٹی ٹیوشن کلب میں کسی نامعلوم بندوق بردار نے ان پر گولی چلادی۔

حالانکہ پارلیمنٹ جس علاقہ میں واقع ہے وہاں زبردست حفاظتی بندوبست ہے۔عمر خالد ” یونائیٹڈ اگینسٹ ہیٹ (United Against Hate)نام کی تنظیم کے زیر اہتمام منعقد ایک پروگرام ”خوف سے آزادی“پروگرام میں شرکت کرنے کانسٹی ٹیوشن کلب جا رہے تھے۔

عینی شاہدین کے مطابق حملہ آور عمر خالد کے قریب پہنچا اور گولی چلائی اور بھاگ کھڑا ہوا۔ اس عینی شاہد نے بتایا کہ ہم لوگ ایک ٹی اسٹال پر تھے کہ ایک سفید قمیص میں ملبوس ایک شخص وہاں پہنچا اور عمر خالد کو دھکا دیا اور گولی چلادی۔

عمر خالد دھکا دیے جانے کے باعث لڑکھڑا گئے اور زمین پر گر گئے اور بندوق بردار کقا نشانہ چوک گیا۔ ہم لوگوںنے اسے پکڑنے کی کوشش کی لیکن اس نے ہوائی فائرنگ شروع کر دی ۔اور فرار ہونے میں کامیاب ہو گیا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Jnu student umar khalid shot at in delhi high security zone unhurt in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply