’اردو گاندھی وادی ہے، امن اور اتحاد کی باتیں کرتی ہے‘: کامنا پرساد

نئی دہلی:(پریس ریلیز) اردوگاندھی وادی ہے، محبت کی زبان ہے،امن و اتحاد کی باتیں کرتی ہے۔ مذہبوں کو زبان درکارہے، لیکن زبانوں کا کوئی مذہب نہیں ہوتا، ان کا کام ہوتا ہے رابطے قائم کرنا، محبتوں کے پل باندھنا۔ان خیالات کا اظہار گذشتہ شام ’جشن بہار ٹرسٹ ‘کی بان و ادبی حلقوں کی معروف شخصیت محترمہ کامنا پرساد نے 21ویں بین الاقوامی مشاعرہ جشن بہار میں اپنے استقبالیہ خطاب میں کیا۔ اس مشاعرے میں شعراءکرام جہاں دہلی کی خوشگوار فضا میں محبت کے رس گھول رہے تھے وہیں مہاتما گاندپگھی کے 150 ویں جینتی کے موقع پر فرقہ وارانہ ہم آہنگی، آفاقی اخوت اور جامعیت کے گاندھیائی نظریات بھی آج کی تازہ
شاعری میں بھرپور نظر آئے۔

مشاعرہ میں بحیثیت مہمان خصوصی شریک دہلی کے نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ دہلی جیسے ہندوستان کی راجدھانی ہے ویسے ہی اردو کی بھی دارالحکومت ہے۔اردوئے معلی بھی یہیں سے ہے اور اردوبازار بھی یہیں ہے۔میں نے اپنے بزرگوں کو اردو پڑھتے، لکھتے دیکھا ہے اور جشن بہار جیسے مقبول مشاعرےاس زبان کی ہندوستانیت کے گواہ ہیں، ایسے میں اس زبان کو جو لوگ آج کل ‘فورین’ (غیرملکی) قرار دے رہے ہیں انہیں ہندوستان کی تاریخ اور مشترکہ تہذیب پر ضرور غور کرنا چاہیے۔
جامعہ ملیہ اسلامیہ کی پہلی خاتون وائس چانسلر محترمہ نجمہ اختر نے ادبی جشن میں بحیثیت مہمان ذی وقار شرکت کرتے ہوئے کہا کہ جشن بہار مشاعرہ ہمارے مشترکہ ثقافتی ورثے کا جشن ہے۔ اردو اپنے آغاز سے ہی ہندوستان کی سیکولر اقدار کی حفاظت کررہی ہے۔ اردو نسل نو کی ذہن سازی میں ایک اہم کردار ادا کرتی ہے، انہیں ادب وآداب سکھاتی ہے۔

مشاعرہ کی صدر اورحال ہی میں ساہتیہ اکادمی ایوارڈ سے سرفراز ممتاز ادیبہ محترمہ چترا مدگل نے کہا کہ دیش اور سماج کی گنگاجمنی تہذیب کو جب جب تنگ نظری نے اکسانے، ادھیڑنے،توڑنے اور الگ کرنے کوشش کی ہے تو اردو آگے آئی ہے۔اس کی نظموں اور غزلوں نے لوگوں کو گلے لگا کر ان کے زخموں پر مرہم کا کام کیا ہے اور سمجھایا ہے کہ اہم اپنی مشترکہ ثقافت کو کیسے سنبھال کر رکھیں اور کیوں کر رکھیں۔مشاعرہ جشن بہار -2019 میں مرکزی خیال قومی یکجہتی اورفرقہ وارانہ ہم آہنگی تھا۔ دنیائے اردو ادب کے سرفہرست ناموں نے اپنی تازہ ترین کلام سے تقریبا چارہزار شائقین کو خوب محظوظ و مسحور کیا۔ دنیا کایہ سب سے بڑا بین الاقوامی مشاعرہ پہلی مرتبہ پوری دنیا میں لائیو ویب کاسٹ بھی ہوا۔

مشاعرہ جشن بہار کی محفل کو کامیاب بنانے والے ممتاز شعرا وشاعرات میں بیرون ملک واشنگٹن سے ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ، ہیوسٹن سے ڈاکٹرنوشہ اسرار،دوحہ قطرسے عزیز نبیل اور ابوظہبی سے سیدسروش آصف، جب کہ ملک ہندوستان سے پروفیسر وسیم بریلوی، ڈاکٹر نصرت مہدی، اقبال اشہر، عقیل نعمانی، پروفیسر مینو بخشی،لیاقت جعفری، پروین کیف، ڈاکٹر نزہت انجم، عبدالرحمن منصور، مدن موہن دانش، اظہراقبال، ندیم شاد اور ناظم مشاعرہ آلوک شریواستوقابل ذکر ہیں۔


غیر منافع بخش جشن بہار ٹرسٹ نے اردو اکادمی دہلی، تکشیلا ایجوکیشنٍ سوسائٹی، ایم آر موارکا فاو¿نڈیشن، دہلی پبلک اسکول متھرا روڈ، دھامپور شوگر ملز ، انڈین آئل کارپوریشن لمیٹید، سواستک الیک، جاہنوی کنسٹرکشن اور النواز ریسٹورینٹ کے تعاون سے یہ ادبی محفل سجائی گئی۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Jashn e bahar trust successfully organised mushaira jashn e bahar in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.