سیف اللہ ساتھیوں کے ساتھ ایک بڑی دہشت گردانہ واردات کا منصوبہ بنارہا تھا:پولس ڈائریکٹر جنرل

لکھنؤ: اترپردیش کے دارالحکومت لکھنؤ کے کاکوری علاقے میں تقریبا 12 گھنٹے تک جاری رہنے والے تصادم کے بعد منگل اور بدھ کی درمیانی شب سیکورٹی فورسز کی گولیوں سے ہلاک ہونے والے سیف اللہ کے ٹھکانے سے ملے ہتھیاروں کے ذخیرے سے واضح ہوگیا ہے کہ وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ کوئی بڑی دہشت گردانہ واردات انجام دینے کا منصوبہ بنا رہا تھا۔
ریاست کے ایڈیشنل پولیس ڈائریکٹر جنرل (نظم ونسق) دلجیت چودھری نے یہاں نامہ نگاروں کو بتایا کہ کانپور کا رہائشیسیف اللہ اپنے چار ساتھیوں کے ساتھ حاجی کالونی میں کرایہ کے مکان میں رہ رہا تھا۔ یہ لوگ یہاں شدت پسند تنظیم داعش سے متاثر ہو کر سوشل میڈیا کے ذریعے بم بنانے اور دھماکہ کرنے کی معلومات حاصل کر رہے تھے۔
انہوں نے بتایا کہ اے ٹی ایس کی طرف سے گرفتار کئے گئے سیف اللہ کے ساتھیوں سے برآمد لیپ ٹاپ سے اہم معلومات ملی ہیں۔ سیف اللہ کے تین ساتھیوں نے کل خود سے بنائے گئے بم سے مدھیہ پردیش کے شاجاپور میں بھوپال۔اجین پسنجر گاڑی میں دھماکہ کیا تھا۔ اس کے بعد مدھیہ پردیش پولیس نے سیف اللہ کے تین ساتھیوں کو پپریا سے گرفتار کیا۔
ان سے پوچھ گچھ پر ملی معلومات کے مطابق مدھیہ پردیش میں گرفتار تینوں مشتبہ افراد اترپردیش کے ہیں۔ ان میں دانش اختر عرف ظفر رہائشی ڈی اے کالونی کانپور، سید میر حسین عرف حمزہ رہائشی اندرانگر، علی گڑھ اور آتش مظفر عرف القاسم رہائشی جاج مﺅ، کانپور شامل ہیں۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Is suspect terrorist saifullah was planning major attacks in up in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply